Sunday, November 2, 2014

Successful culmination of Hajj 2014. Arrangement acclaimed

حج  2014 بخیر و خوبی پورا ہوا

الحمداللہ حج 2014 بخیر و خوبی تکمیل کو پہنچا اور حجاج کرام حج و زیارت کی سعادت سے سرفرازی ہوکر اپنے وطن واپس آگئے۔ حج 1435ھ بفضل تعالیٰ انتظامی اعتبار سے کامیاب ترین حج قرار پایا۔ انتظامات چست و درست ہونے کی وجہ سے حج کے دوران کوئی حادثہ پیش نہیں آیا، حالانکہ وبائی مرض ابولا سے عازمین کے متاثر ہونے کا سخت اندیشہ تھا۔ اس کے لئے جوسخت احتیاطی اقدامات کئے تھے وہ کارگر ثابت ہوئے۔
  اس سال دنیا بھر کے کوئی 160ممالک سے زاید از بیس لاکھ خوش نصیبوں نے حج اکبر کی سعادت حاصل کی۔ حج کیونکہ جمعہ کوہوا، اس لئے قرب و جوار سے ہزارہا غیر مجازافراد بھی آپہنچے۔ سعودی حکام نے اس مسئلہ کا مقابلہ بغیر کسی حادثہ کے کیا۔
 حج کے دوران دنیا کا سب سے بڑااجتماع ہوتا ہے اور ہرشخص عقیدت اور جذبہ ایمانی سے سرشار ہوتا ہے۔مختلف زبانیں بولنے والے اتنے بڑے اجتماع کو سنبھالنا،ان کو تمام مناسک سے بخیریت اور مقررہ اوقات سے گزارنا، بڑے صبروضبط اورچست و درست نظم کا طالب ہوتاہے۔ سنہ 1990ء میں رمی جمرات کے موقع پربدقسمتی سے جو بدنظمی ہوگئی تھی اس میں 1426افراد جان بحق ہوگئے تھے۔ 2006 میں بھی336 عازمین جان بحق ہوئے تھے۔ اس کے بعد ہراس مقام کی توسیع کی گئی اور انتظامات کو مزید چست اوردرست کیا گیاجہاں کسی حادثہ کا اندیشہ ہوسکتا تھا۔عازمین حج کو منظم گزارنے کے لئے ہزارہا کارکن ہمہ وقت مستعد رہتے ہیں۔
علاوہ ازیں بیس لاکھ افراد کے کھانے، آرام سے رہنے، سفر کرنے اور صفائی ستھرائی کے لئے وسیع منصوبہ بندی ہوتی ہے اوراس کا موثرنفاذ مطلوب ہوتا ہے۔ ہزارہا لوگ ادھر ادھر بھٹک جاتے ہیں، ان کو ان کی قیام گاہ تک پہنچانے کے لئے قدم قدم پر رضاکار موجود رہتے ہیں۔ کون نہیں جانتا کہ غیر تربیت یافتہ اتنے بڑے اجتماع کا انتظام کرنا غیر معمولی مہارت، تربیت اورللٰہیت کا طالب ہے جس کا مظاہرہ الحمداللہ خادمین حرمین شریفین نے بخوبی کیا، جس کے لئے شاہ سے ادنیٰ کارکن تک ہر فرد یقینا مبارکباد اور دعائے خیر کامستحق ہے۔ امسال ہندستانی حجاج کرام کی طرف سے بھی شکایات سننے کو نہیں ملیں۔ دعا ہے کہ یہاں سے وہاں تک حج انتظامات میں شریک ہرفرد کو اللہ تعالیٰ جزائے خیرسے سرفراز فرمائے اور جن کو یہ سعادت حاصل ہوئی ہے ان کے اخلاق وکردار میں اس کے اثر کو قائم فرمائے۔ آمین۔

No comments: