Friday, November 14, 2014

Shibli Nomani Centenary Celebration, Seminar on 29 Nov-1 December

شبلی صدی تقریبات: سیمنیار 29نومبرتا یکم دسمبر
اعظم گڑھ میں  دنیا بھرسے اسکالرس کی شرکت متوقع 
اعظم گڑھ ۴۱،نومبر۔علامہ شبلی نعمانی(ولادت:3 جون،1857ء، وفات:18نومبر 1914)کی شخصیت علمی خدمات اورافکارو خیالات پرایک  بین الاقوامی سمیناران کے قائم کردہ باوقار علمی ادارہ ’دارالمصنفین شبلی اکیڈمی‘ کے تحت ۹۲نومبر تایکم دسمبر یہاں ہوگا جس کا افتتاح نائب صدر جمہوریہ جناب حامد انصاری کریں گے۔
سیمنار کے دوران علامہ شبلی سے متعلق کم سات کتابوں کی رسم اجراء بھی عمل میں آئی گی۔ یہ اطلاع اکیڈمی کے ڈائرکٹر پروفیسر اشتیاق احمد ظلی نے ایک پریس رلیز میں دی ہے۔ توقع ہے کہ سمینار میں سعودی عرب،آسٹریلیا،امریکہ، جنوبی افریقہ،سوڈان،ملیشیا،مصر،ترکی،پاکستان اور دیگر ممالک کے نامور اسکالر زبھی شریک ہونگے۔ توقع ہے کہ ان اسکالرز کے توسط سے شبلیات کے ذخیرہ میں اضافہ ہوگا اور علامہ شبلی کے فکر و فن کی نئی جہتیں بھی سامنے ائیں گی۔ اس موقع پر کتابوں کی نمائش کا بھی اہتمام کیاجارہا ہے جس میں ملک کے سے ممتاز پبلشرز حصہ لیں گے۔سیمنار میں جن کتابوں کا اجراء ہوگا ان میں ”’شذرات شبلی“ ”،شبلی کی آپ بیتی“،”دارالمصنفین کے سو سال“،”محمد شبلی نعما نی“ (انگریزی)”رسائل شبلی“،”عصر حاضر میں علامہ شبلی کے تعلیمی افکار کی معنویت“اور ”بزم شبلی
کا کبیر جائسی نمبر“شامل ہیں۔ 
اس سمینار میں جن اسکالرس کی شرکت متوقع ہے ان کے نام یہ ہیں: ڈاکٹر ابراہیم محمد البطشان،ڈاکٹر عزیر شمس،ڈاکٹر اجمل ایوب اصلاحی(سعودی عرب)، ڈاکٹر اختر محمد سلیم (آسٹریلیا)،پروفیسر ڈیوڈلیلی ولڈ،میکس بروس(امریکہ)پروفیسر سمیع سلیمان احمد،پروفیسر محمد سلاما علاّوی،پروفیسر طالب الپ (ترکی)،پروفیسر سعید الحفناوی،پروفیسر سحرمحمد القطب پروفیسر حسن ابراہیم احمد(مصر)پروفیسر جمیل فاروقی،ڈاکٹر ارشد اسلام،ڈاکٹر اسرار احمد خاں (اسلامک انٹرنیشنل یونی ورسٹی ملیشا) پروفیسر رفیع الدین ہاشمی،پروفیسر معین الدین عقیل،پروفیسر محمد الغزالی،پروفیسر عارف نوشاہی،پروفیسر حفیظ الرحمن طاہر تونسوی،پروفیسر ہمایوں عباس،ڈاکٹر محمدعبداللہ،ڈاکٹر خالد ندیم،ڈاکٹر ارشد زماں،ڈاکٹر محمد ارشد،ڈاکٹر محمد سعید صدیقی،ڈاکٹر محمد علی غوری(پاکستان) کی شرکت متوقع ہے۔
اس موقع پرمدھیہ پردیش کے گورنرمحترم جناب رام نریش یادو، لیفٹنٹ جنرل ضمیرالدین شاہ(وائس چانسلر علی گڑھ مسلم یونی ورسٹی)،شمس الرحمن فاروقی (سابق چیرمین قومی کونسل برائے فروغ اردو زبان)پروفیسر شمیم جے راج پوری (سابق وائس چانسلر مولانا آزاد نیشنل اردو یونی ورسٹی۔حیدرآباد)،پروفیسر اخترالواسع (کمشنر برائے لسانی اقلیات،حکومت ہند)،پروفیسر محمد طلعت(وائس چانسلر جامعہ ملیہ اسلامیہ)پروفیسر خان مسعود(وائس چانسلر خواجہ معین الدین چشتی اردو عربی،فارسی یونی ورسٹی)،پروفیسر نعیم الرحمن فاروقی(وائس چانسلر الہ آبادیونی ورسٹی)سید شاہد مہدی(سابق وائس چانسلر جامعہ ملیہ اسلامیہ)،جناب نسیم احمد (سابق وائس چانسلر علی گڑھ مسلم یونی ورسٹی)بھی شریک ہورہے ہیں۔
مولانا سید محمد رابع  الحسنی ندوی، مولانا سعید الرحمن اعظمی،مولانا سید جلال الدین عمری،مولانا تقی الدین ندوی پروفیسر یسین مظہر صدیقی،پروفیسر محسن عثمانی،پروفیسر خالد محمود،پروفیسر ظفر احمد صدیقی،پروفیسر عبدالحق،پروفیسر علی احمد فاطمی،پروفیسر شہپررسول،ڈاکٹر محمد الیاس الاعظمی،ڈاکٹر احمد محفوظ،شمیم طارق، ابوالکلام،جناب ایوب واقف،پروفیسر خورشید نعمانی،عارف عمری،ڈاکٹر جمشید ندوی،ڈاکٹر عبدالرشید،ڈاکٹر ظفرالاسلام،پروفیسر سعود عالم قاسمی،پروفیسر صلاح االدین عمری،پروفیسر شافع قدوائی،پروفیسر سمیع اختر فلاحی،ڈاکٹر شباب الدین،ڈاکٹر رضی الاسلام ندوی،ڈاکٹر ابوالکلام،ڈاکٹر عتیق الرحمن،ڈاکٹر علاء الدین خاں،ڈاکٹر عمیر منظر،ڈاکٹراحسان اللہ فہد،ڈاکٹر عرفات ظفر بین الاقوامی سمینار میں شریک ہورہے ہیں اور اس موقع پر مقالے پیش کریں گے۔

ہندی ادب و صحافت سے دیوندر راج انکر،ڈاکٹر کاشی ناتھ سنگھ،شیلا دھر منڈلوئی،پرشتم اگروال،پنکج سنگھ،وشوناتھ پرشاد تیواری،ارملیش کی منظوری آچکی ہے اور یہ لوگ بھی اپنے افکار و خیالات پیش کریں گے۔

No comments: