Friday, December 13, 2013

Children Dying in Muzaffar Nagar Camps, SC Pulls UP. Government




مظفرنگر کے مظلوموں پر اب سردی کی مار
مظفرنگر میں یادو سرکار کی ناعاقبت اندیشی، شدید نااہلی اور لاپروائی کے نتیجہ میں فساد کے مارے خاندانوں پر اب سردی کی مار پڑ رہی ہے۔ اطلاع یہ ہے کیمپوں میں اب تک تقریباً پچاس بچّے سردی سے لقمہ اجل بن چکے ہیں جس پر پارلیمنٹ میں ہنگامہ ہوا اور سپریم کورٹ نے بھی نوٹس لیااور اس بات پر ناراضگی ظاہر کی یوپی سرکار نے عدالت عالیہ کی سابقہ ہدایات پر عمل نہیں کیا۔ سپریم کورٹ نے حکم دیا تھا کہ کمپوں میں پڑے مصیب زدگان کو ہر طرح کی سہولت یوپی سرکار فراہم کرے۔ ملائم سنگھ یادو اور ان کے صاحبزادے اکھلیش یادو مصیبت زدگان کی حالت سے تو چشم پوشی اختیار کررہے ہیں اور چند مسلم شخصیات کو متاثرکرکے یہ سمجھ رہے ہیں کہ ان کی پارٹی کو آئندہ الیکشن میں بھی عوام کی ویسی تائید مل جائیگی اور ملائم یادو کا 7ریس کورس روڈ کا راستہ صاف ہوجائیگا۔ مگر ایسا ہونے والا نہیں ہے۔ گزشتہ چند روز میں کئی ٹی وی چینلز نے کیمپوں کی حالت زار دکھائی ہے۔ اسی میں سے ایک تصویرآپ اوپر دیکھ رہے ہیں۔ساتھ ہی یہ افسوسناک خبریں بھی آرہی ہے رلیف کے لئے جو چندے عوام نے دئے ان میں خورد برد بھی ہورہی ہے۔ 
ان حالات میں جماعت اسلامی ہندنے ایک پہل کی ہے۔ گجرات کے کارکن جناب محمد شفیع مدنی کی سربراہی میں وفود گاؤں گاؤں جاکر مقامی باشندوں سے مل رہے ہیں اور گھروں سے اجڑے ہوئے لوگوں کی واپسی کا ماحول بنانے میں کوشاں ہیں۔کچھ پیش رفت بھی ہوئی ہے۔ مدنی صاحب پرامید ہیں کہ حالات رفتہ رفتہ بدل جائیں گے۔ کچھ دیگر جماعتیں بھی مکان وغیرہ بنارہی ہیں مگر ساتھ ہی مختلف عنوانوں سے یادو سرکار کا ڈنکا بھی پیٹ رہی ہیں۔ملاحظہ فرمائیں نیچے کی رپورٹ۔

No comments: