Saturday, January 20, 2018

“Democracy Is At Stake, Things Are Not In Order.” Four Senior Most Judges Put the Nation on Alert

“Democracy Is At Stake, Things Are Not In Order.”
Four Senior Most Judges Put the Nation on Alert
Syyed Mansoor Agha
One Hon. Judge of the Supreme Court made National Anthem must, before screening a film; three judges held the death sentence of an accused Yaqub Menon in the dark of mid night; and three Hon. Judges held Instant Talaq illegal. Now four senior most Honorable Judges of SC have put the nation on notice: “Democracy is at stake, things are not In order. Many things that are less than desirable have happened in the last few months.” The warning came in a specially called press conference on Friday, January 12, 2017 jointly addressed by Justice J. Chelameswar, second in seniority in the Supreme Court, justices Madan Bhimrao Lokur, Ranjan Gogoi and Kurian Joseph. Justice Gogoi is in line to become the Chief Justice of India in October 2018, succeeding Dipak Misra and Justice Chelmeswar is the senior most among 25 Judges in SC.
The serious and most unprecedented warning underscores the fears about the functioning of Constitutional institutions, aired by intellectuals, journalists and observers for last three years. It is the cry of a shepherd against “The wolf in the goats”. Alas it came late when wolf has already mowed many goats. Many sacred democratic values had been deliberately eroded and the grip of arbitrariness setting stronger day and night. On the face, it is warning by four Judges, but it represents apprehensions of many others.
As Mr. Kapil Sibbal, Senior Advocate of SC put, “They demonstrated rare courage and commitment to protect the independence and integrity of the institution. Their moments with the press were heart-warming and moving. In a few words, they conveyed to the nation the malaise that has set in, warning that democracy was under threat. We must heed that warning.”
Dr. Faizan Mustafa, VC of NALSAR Law University observed, “The four judges have raised some very pertinent issues about the administrative functioning of the CJI. The integrity of the apex court is now at its lowest ebb and it will take years to regain people’s confidence.” Justice Chelameswar called it an “extraordinary” event in the judicial history and that circumstances compelled them to reach out in order to discharge their “debt to nation.” as the credibility of the highest judiciary was at stake.
The judges did not speak much and left scope to speculate. The points, raised may be put in a nutshell:
·         Hallmark of good democracy is an independent judiciary, without it democracy won't survive.
·         The administration of the Supreme Court is not in order and many things less than desirable has happened in the past few months.
·         We tried to collectively persuade the CJI so that he takes remedial measures but our efforts have failed. We met the CJI today morning also, but we failed to convince the CJI.  
·         About a couple of months back, four of us gave a signed letter to the Chief Justice of India. We wanted a particular thing to be done in a particular manner. But the way it was done, it raised further questions about the integrity of the institution.
·         We are left with no choice but talk to the nation directly. We have seen a lot of wise men but we don't want wise men to tell us later after 20 years that the four of us have sold our souls. We construe this as a responsibility to the nation and we have done it.
The Judges referred to a “particular case” and the “particular manner” in which it was handled. When asked, if it is Justice Loya’s case, Justice R. Gogoi nodded in affirmative. Judge B H Loya was hearing Sohrabuddin fake encounter case in which Mr. Amit Shah is accused and had to go to jail. Reportedly Justice Loya was under pressure. He was transferred a day before a crucial hearing, against the rules laid-down by SC. The judge posted in his place exonerated Mr. Shah from his alleged guilt. A few days later, Judge Loya was lured to Nagpur for attending a marriage and there he died in mysterious circumstances. His family was not informed, autopsy done in an unprecedented hurry and body sent, un-escorted to his native village in District Latur where his father lived, instead of Bombay where he lived. His mobile handed over to an RSS man.
Three years of his deat, a PIL in Bombay HC and another in Chandigarh HC were fixed to be heard when an legal practitioner filed another in SC and CJ disregarding propriety of the PIL, and ignoring senior judges assigned it to a junior judge, who is said to be close of politicians. The case was to come-up for hearing on Friday itself the day, press conference was held. These senior judges did meet the CJI in the morning but nothing came out of this meeting. The filing of PIL in SC may be a ploy to avert any direction from any HC embarrassing a top political leader. While an order by SC Judge will be good enough to bury all the efforts to bring out the truth of Loya’s mysterious death. Though it was not stated explicitly by the four judges, but on the face this compelled them to reach out to the nation.
This is not only one issue. There are other issues also raised in a seven page letter, the four judges wrote to CJI some two months ago. The letter released to the press, contained some core issues:
·         The judges draw the attention of CJI on the manner he was assigning politically sensitive matters to a particular junior judge, ignoring established conventions. They explicitly asserted that master of roster does not in any way mean “recognition of any superior authority, legal or factual of the Chief Justice over his colleagues”. They pointed out, “there have been instances where cases having far-reaching consequences for the nation and the institution had been assigned by the Chief Justice of this Court selectively to the benches ‘of their preference’ without any rational basis for such assignment. This must be guarded against at all cost.” The underlining of the last sentence shows bench hunting is the central issue. As Dr. Mustafa Faizan, adduced, “Lately, bench formation in the SC has been against the text of the Constitution. The Constitution says a constitutional issue shall be heard only by a five-judge bench but recently a number of two- or three-judge benches have heard and decided matters involving issues of constitutional interpretation.”
·         The letter also mentioned an order (October 27, 2017), passed in R P Luthra case, by a two-judge bench on the delay in the finalisation of the MoP on the appointment of superior judges. This is a matter related to NJAC case which was decided by the constitution bench. Assigning it to relatively junior two judges bench was improper and should have been ideally assigned to the same bench. The order two judges passed will reopen the matter which was almost settled between the SC and the Government during the tenure of former CJI Justice JS Kheher.  
·         The latter also referred to the contempt case against Justice CS Karnan, and pointed out the fact, in Indian history no judge has so far been impeached for “misconduct or proved mis-behaviour”. These are the only grounds on which judges can be impeached.
·         The letter kept the option to invite attention of CJI to other matters, once he takes corrective measures about this two-judge order in the MoP, case. They said, will apprise him of other similar judicial orders which “require to be similarly dealt”.
As a matter of principle, judges are not supposed to comment on the judicial order of brother judges, but this is an unprecedented moment. This press conference has drawn the attention of the nation towards un-appropriate practices getting inroads in our judicial system and “has now reached rock bottom and the SC is suffering from a serious crises of legitimacy. In a rule-of-law-based legal system, no one including the CJI is above law. The CJI does have the power to form benches but this power is to be exercised judiciously, not arbitrarily. Arbitrariness is antithesis to rule of law and constitutionalism. The SC itself has come down heavily on litigants on of “bench hunting”. It is difficult to believe the CJI himself is doing it.” Surely it is very shocking that our SC is suffering from serious crises of legitimacy. We can only hope that SC will judiciously rectify if there are any biases. The CJI, as judges indicated is the first among equals and should follows set practices. Out constitution does not confer arbitrary power upon CJI. As Dr. BR Ambedkar said in Constituent Assembly, “The Chief Justice is a man with all the failings, all the sentiments and all the prejudices which, we as common people have.”
Use it in separate box.
Three of the politically sensitive cases assigned to the bench Justice Arun Mishra, 10th in seniority among the 25 Supreme Court judges:
1. Sahara Birla Diary case mentioning payments for the than CM of Gujarat.
2. CJAR and Kamini Jaiswal petitions in Medical College bribery scam, in which a former Judge of Odisha HC was arrested by CBI for playing as conduit for getting a favorable order from three judge bench of SC headed by Justice Deepak Mishra. CBI has also seized a huge amount supposedly to be used as bribe.
3. PIL on death of Judge BH Loya.
These cases are politically extremely sensitive with needle of suspicion pointing towards either Mr. Narenda Modi, Mr. Amit Shah, or Justice Deepak Mishra. Is it a mere coincidence that all the cases have ended up before Justice Arun Mishra?

(Writer is a Delhi based senior Urdu Journalist : syyedagha8@gmail.com)

حکمت عملی بدلئے ، ہوا کا رخ بدل جائے گا Change Strategy, Get the Direction of the AirChanged

ہندو بیوہ خواتین، ورندون کے ایک آشرم میں کھانے کے انتظارمیں

حکمت عملی بدلئے ، ہوا کا رخ بدل جائے گا
سید منصورآغا، نئی دہلی
ملت کا اتحاد اس بات کا متقاضی ہے کہ ملی رہنما کسی بھی مسئلہ میں برسرعام ایک دوسرے پر انگشت نمائی نہ کریں۔ گزشتہ جمعہ(12جنوری) ایک بڑی تنظیم کے ایک نہایت لائق احترام ذمہ دار کا ایک مضمون تین طلاق بل کے تعلق سے ایک کثیرالاشاعت اخبار میں شائع ہوا ، جس کا ابتدائی حصہ قابل توجہ مفید اورچشم کشا مشوروں سے لبریز ہے۔ہم اس کی بہ دل وجان تائید کرتے ہیں۔ لیکن اس کے دوسرے حصہ میں بل کی پیشی کے وقت لوک سبھا میں بعض مسلم ممبران کی خاموشی کا شکوہ کیا گیا ہے۔ افسوس کہ یہ بات گرفت میں نہیں آسکی کہ ملک کے موجودہ سیاسی ماحول میں تدبیراورتدبرکی ترجیحات کیا ہوں اورجو روش ان محترم رہنماؤں نے لوک سبھا میں اختیارکی، اس ماحول میں درست رویہ وہی تھا یا کچھ اور؟
ستم بالائے ستم یہ کہ اس شکوہ کو بنیادبناکردہلی کے ایک روزنامہ نے جو رپورٹ شائع کی ہے اس میں دومحترم مسلم ارکان لوک سبھاکونام لے کر مطعون کیا گیا ہے۔ہرچند کہ محترم کالم نگار نے اپنی تحریر میں کسی کا نام نہیں لیا، لیکن رپورٹ کی سرخی میں ناموں کے ساتھ ان کے فوٹو بھی لگادئے گئے ہیں۔یہ بات اس لئے افسوسناک زیادہ ہے کہ ان دنوں بزرگوں نے اپنی عمر بساط بھر ملک وملت کی خدمت میں لگادی اور عملی سیاست کاان کا تجربہ بھی طویل ہے ۔ اب جب کہ وہ عمرکے آخری حصہ میں ہیں، ان کی خدمات کے اعتراف کے بجائے ان کی سیاسی سمجھ کو نشانہ بنانا اور برملا مطعون کرنا تکلیف دہ ہے۔ان کی سیاسی بصیرت سے اختلاف ہو سکتا ہے۔ ان سے گھرکے اندر بیٹھ کر بات کرنے کے بجائے اپنی رائے کو اعلیٰ سمجھ کر ملت میں خلفشار کا سبب بنانا یقیناًمستحسن نہیں ہے۔استغفراللہ۔
کیا قیامت ہے کہ جن کے لئے رک رک کے چلے
اب وہی لوگ ہمیں آبلہ پا کہتے ہیں
الحمدللہ نہ تومجھ پر ذاتی طورسے ان دونوں بزرگ قائدین کا زرہ برابر کوئی بار احسان ہے اور نہ میں کانگریس کا مدح خواں ہوں، البتہ غلام نبی آزادصاحب کی سیاسی سمجھ کا معترف ہوں۔ غورکیاجائے تو لوک سبھا میں بشمول کانگریس غیربھاجپائی پارٹیوں نے جو حکمت عملی اختیا رکی وہ موجودہ ماحول میں عین سیاسی مصلحت کے مطابق تھی۔بحث کے دوران میں اس خاموشی پر جو ان مسلم ممبران نے اختیار کی ،مکدر ہونے کے بجائے ، اس حکمت عملی کے نفع ونقصان کو سمجھنا اوراس کے بعد کے نتائج کو نظرمیں لانا لازم ہے ۔بہت شور مچانے سے ملت کا کوئی مسئلہ حل ہوا ہوتو بتائیے۔ بیرسٹراسدالدین اویسی نے بیشک ایک جذباتی تقریر کی جوان کی جماعتی مصلحت کے عین مطابق تھی، اگرچہ ان سے توقع یہ تھی وہ بل کے قانونی نقائص اجاگرکریں گے۔ مان لیجئے کہ ہدف تنقید بنائے گئے دونوں مسلم ممبران اورکچھ دیگر ممبران بھی بل کی مخالفت میں ایسی ہی جوشیلی تقریریں کردیتے ،تو کیا بل کی منظوری رک جاتی؟ ہرگز نہیں۔بھاجپا کی بھاری اکثریت ہے۔ بل بہرحال منظورہوجاتا۔گرماگرم بحث کے باجود جب بل پاس ہوتا، تو مسلم مخالف حلقوں میں اور میڈیا میں جشن کا جوماحول ہوتا، اس کا اندازہ کرنامشکل نہیں۔ اس فتح کو ہمارے مخالفین جس طرح بھناتے ،اس کا تصور بھی تکلیف دہ ہے۔ لیکن کانگریس اور دیگر غیر بھاجپائی پارٹیوں کی حکمت عملینے سیاسی فائدہ اٹھانے اورفرقہ پرستی کے شعلے بھڑکانے کا ایک موقع بھاجپا سے چھین لیا۔اگلے ہی موقع پر انہی پارٹیوں کی تدبیر کی بدولت راجیہ سبھا میں سرکار کے منصوبے کو شدید جھٹکا لگا۔ شاید ساڑھے تین سال میں یہ پہلا موقع تھا جب مودی جی نے اپنے خواب کویوں شکست سے دوچارہوتے دیکھا۔ہمیں سمجھنا چاہئے کہ سیاست میں ہرموقع پر بولنا ہی نہیں،کبھی خاموش رہنا بھی مصلحت کا تقاضا ہوتا ہے۔لوک سبھا میں مزاحمت نہ کرکے اورراجیہ سبھا میں آواز اٹھانے کی جو تدبیراختیارکی گئی اس کا نتیجہ ہمارے سامنے ہے۔اب اس بل کا موجودہ صورت میں منظور ہو جانا ممکن نہیں ۔گویا ہمیں ایک شیطانی قانون سے رلیف مل گئی ہے۔ جوخطرہ نزدیک آگیا تھا وہ ٹل گیا ہے۔ اب دیکھنا یہ ہے کہ جو تنظمیں تین طلاق کے تقدس کیلئے مصروف پیکار تھیں وہ اس مہلت کا کیا فائدہ اٹھاتی ہیں؟
صحیح بات وہی ہے جو زیرتبصرہ کالم کی سرخی میں سمودی گئی ہے۔’’اگرہم خود شریعت پرعمل کرنے کا تہیہ کرلیں توکوئی طاقت ہمیں اس سے روک نہیں سکتی۔‘‘ کالم نگارمحترم نے ، جوجیدعالم دین ہیں، اس نکتہ کی دل نشین وضاحت کی ہے کہ تین طلاق کا معاملہ قرآن کے واضح حکم یا قاطع سنت سے اخذ نہیں ہے،بلکہ فقہاء کی استنباطی اوراختلافی رائے ہے ۔ اس میں کسی ایک رائے پر اصرار درست نہیں۔ حالات اورظروف کی رعایت لازم ہے۔ موصوف کی یہ بات اگران کی تنظیم قبول کرلیتی جس کے وہ سیکریٹری ہیں اوراس مشورے کے مطابق موقف عدالت میں اختیار کر لیتی توصورتحال ایسی خراب نہ ہوتی، جیسی آج ہے۔
بہرحال جو ہوگزرا، سو ہوگزرا۔ماضی کی تاریکیوں میں بھٹکتے رہنے کے بجائے مستقبل کیلئے ایسا لائحہ عمل بنایا جائے جو ملک اورملت دونوں کیلئے باعث راحت ہو۔ موصوف محترم نے بجا طور پر ملت کی آگاہی پرزوردیا ہے۔ معاشرے کی اصلاح کی یہی بات اس وقت اخباروں کی شہ سرخی بنی تھی جب مسلم پرسنل لاء بورڈنے کیس کی سماعت کے دوران سپریم کورٹ میں کہا تھاکہ بورڈ طلاق ثلاثہ کی برائی کو روکنے کیلئے خود عوامی مہم چلائے گا۔ہم نے اس دم بھی اس کا خیرمقدم کیا تھا اورآج بھی یہ یاد دلانا چاہتے ہیں کہ عدالت کودی گئی اس یقین دہانی اوروعدہ کو چھ ماہ سے اوپر گزر چکے ہیں۔ابھی تک اس سمت بورڈ نے ایک بھی قدم نے نہیں اٹھایا ہے۔حالانکہ وقت اورحکمت کا تقاضا یہ ہے کہ اس مہم کوپوری شدت کے ساتھ اٹھایا جائے اور سرکار کو یہ باورکرادیا جائے کہ یہ ہمارا معاملہ ہے، ہم خوداصلاح کررہے ہیں۔ کسی کو دخل دینے کی ضرورت نہیں۔ اس مہم کو زیادہ شدت سے چلانے کی ضرورت اس لئے بھی ہے کہ ملت کو گزشتہ چار دہائی سے یہ بتایا جارہا ہے کہ تین طلاق کاتحفظ،شریعت کا تحفظ ہے، اورعوام یہ سمجھ بیٹھے ہیں کہ اس خباثت کوچھوڑدینا ان کیلئے توہین کاباعث ہے۔اس لئے ان کواب یہ سمجھانے کیلئے مزید توانائی درکار ہے کہ اس طریقہ کوگناہ سمجھو اور چھوڑ دو۔
ہمیں اپنی حکمت عملی میں ایک پہلو کا اوراضافہ کرنا چاہئے۔ جوہماری آنکھ میں کجی بتاتے نہیں تھکتے، ان کو آئینہ دکھادیاجائے۔ خود جن کے سماج میں خواتین کا حال خراب ہے، وہ ہم پر کیسے ملامت کرتے ہیں؟سرکارمسلم خواتین کوانصاف دلانے کا ڈھونگ کرہی ہے، اس کو بھی بتادیں کہ زرا ہندوخواتین کے حال پر بھی توجہ دے۔ راجیہ سبھا میں جب سرکار بل منظور نہیں کرا سکی اور پسپا ہونے پرمجبورہوگئی توارون جیٹلی جی نے کہا تھا:’’آج پارلیمنٹ کے پاس سنہری موقع تھا کہ وہ ناانصافی جو مسلم خواتین کے ساتھ ہورہی ہے، ختم ہوجاتی۔ کانگریس پارٹی کے اس رویہ کی بدولت یہ ناانصافی جاری رہے گی۔‘‘
طلاق سے متاثرہ مسلم خواتین سے ہمدردی کا شکریہ۔ مگرجیٹلی جی کبھی ان غریب مسلم خواتین کا بھی ذکرکرلیا کیجئے جو 2002 سے انصاف کی منتظرہیں۔ جن کی برسرعام اجتماعی عصمت دری کی گئی، گھر اور کاروبار لوٹے اورجلائے گئے، نظروں کے سامنے ان کے شوہر اوربچے ہلاک کر دئے گئے، زندہ جلادئے گئے ۔ان میں ایک بوڑھی خاتون ذکیہ جعفری بھی ہیں، عشرت جہاں کی والدہ بھی ہیں اورہزاروں ان نوجوانوں کی مائیں، بہنیں اورازواج بھی ہیں،جن کو دہشت گردی کا الزام لگا کرجیلوں میں ڈال دیا گیا ہے۔ تین طلاق کی ماری مسلم مطلقہ خواتین کی تواتنی فکر، جن کی تعداد چند سوسے زیادہ نہیں، کچھ فکر ہماری ہندوماں بہنوں کی بھی کرلیجئے ۔سنہ 2011کی مردم شماری کے مطابق ہندوبیواؤں کی تعداد 4کروڑ 30لاکھ ، طلاق شدہ کی زایداز دس لاکھ اور بیس لاکھ کے قریب وہ دکھیاری ہیں جن کوبغیر طلاق کے چھوڑدیاگیاہے۔ مسلم مطلقہ اوربیوہ خواتین توخاندانوں میں ایڈجسٹ ہوجاتی ہیں، یا دوسری شادی ہوجاتی ہے، آپ ان خواتین کی فکر کرلیجئے، جن کا کوئی پرسان حال نہیں۔جن بیچاریوں کو شوہرکے انتقال کے بعد منحوس اور بدشگون سمجھا جاتا ہے۔ ان کو پہلے شوہر کی چتا میں زندہجلادیا جاتا تھا، اب گھروں سے نکال دیاجاتاہے ۔ان میں نوجوان بھی ہیں ، ادھیڑ عمر بھی اوربوڑھی بھی،جوآشرموں میں پڑی ہیں۔ کچھ بھیک مان کرگزارہ کرتی ہیں۔خبریں ان کے جنسی استحصال کی بھی آتی ہیں۔ان کی خبرگیری کچھ مشکل بھی نہیں۔ جس طرح حج سب سیڈی بند کی ہے اسی طرح دھارمک یاتراؤں کیلئے دی جانے والی سب سیڈی بند کرکے رقم ان خواتین پر خرچ کیجئے۔ میلوں ٹھیلوں کا انتظام بھی سادھو سنتوں اورمندروں کو کرنے دیجئے جن کے پاس دولت کی کمی نہیں۔
روزنامہ ہندو (9اکتوبر2017) میں ایک رپورٹ بعنوان، "What it means to be a widow in India today". شائع ہوئی ہے جس میں ان خواتین کی ناقابل بیان جسمانی اورذہنی اذیت کا نقشہ کھینچا گیاہے جس میں یہ بے بس خواتین گھروں سے دور مختلف آشرموں میں سسک سسک کردم توڑ دیتی ہیں۔ بین اقوامی شہرت یافتہ جریدہ ’’ٹائم‘‘ نے ایک طویل رپورٹ بعنوان ، ’’اگر تم ہندوستانی بیوہ ہو، توتمہارے بچے تم کو گھرسے باہرلات مار کرنکال سکتے ہیں، تمہاری ہرچیز چھین سکتے ہیں۔‘‘شائع کی ہے۔ "If You're an Indian Widow, Your Children Could Kick You Out and Take Everything". ۔ اس رپورٹ میں کہا گیا ہے ’’ہندستان میں شوہر اگر نہ رہے توبہت سی خواتین کی زندگی بھیک مانگتے اوربے بسی کے عالم میں گزرسکتی ہے۔ اس کے باوجود ملک میں ان کے حال کی بہتری کے لئے کچھ نہیں ہورہا ہے۔‘‘
میں کہتا ہوں کہ تین طلاق کے نام سے مسلم خواتین پر ظلم کااتنا شور اٹھا، آخر اہل اسلام کو کس نے روکا ہے کہ ایک خیرامت کے ناطے ملک اور قوم کی ان غیرمسلم بیوہ، طلاق شدہ اور بغیر طلاق چھوڑی ہوئی خواتین کے حق میں آواز اٹھائیں؟ اپنی حفاظت بیشک کیجئے، لیکن ہماری فکرکا اصل محور عالم انسانیت کی بہبود ہونا چاہئے۔ یہی اسوہ رسول صلعم ہے۔ آپ ﷺ کی دعوت دین کا اصل یہی ہے۔ آپ صلعم نے جس وقت لڑکیوں کو زندہ درگورکرنے کے خلاف آواز اٹھائی تھی، یہ مٹھی بھر اہل ایمان کا مسئلہ نہیں تھا،بلکہ مشرکین عرب کا مسئلہ تھا۔ آپ ﷺنے جو تدابیر اختیارکیں ان کا محوراپنے صاحب ایمان ساتھیوں کی حفاظت تک محدود نہیں تھا بلکہ رہتی دنیا تک عالم انسانیت کی بھلائی تھا۔اگرآج ہماری تنظیمیں مصیبت زدہ غیرمسلم بہنوں کے حق میں اٹھ کھڑی ہوں، توتین طلاق کے بہانے جولوگ ہمیں نشانے پر لئے ہوئے ہیں،خود گھٹنوں کے بل آجائیں گے۔ اپنے دفاعی حصاروں کو توڑ کر باہرآجایئے اورایسی مہم چھیڑیئے جس سے ہم پرحملہ کرنے والے خودشرمندہ ہوکر پسپا ہوجائیں۔غیرمسلم خواتین کا بھی کچھ بھلا ہوجائے جن کے مصائب کیلئے عنداللہ ہم بھی جواب دہ ہیں۔ 
syyedagha8@gmail.com

Friday, January 5, 2018

Bill to Criminalise Instant Talaq Illogical, Will destroy Family Life, Send More Muslims to Jails

Bill to Criminalise Instant Talaq Illogical
Will Destroy the Family, Send More Muslims to Jails
Syyed Mansoor Agha
Lower house of Indian Parliament, The Lok Sabha (LS) virtually created a history of sorts on 28 Dec, 2017 by bulldozing a bill, within minutes, titled, “Muslim Women (Protection of Rights on Marriage) Bill 2017”. If enacted by the Upper House (Rajya Sabha) and enforced, the law will provide another tool in the hands of the Government to send more Muslims in the Jails, and gloom for the woman at the odds with her husband. As Dya Bhattacharya feels, “Draft law is more focused on victimising Muslim women rather than empowering them.”
In the annals of Indian Legal History, this is for the first time that a bill was enacted in such haste and without consulting the concerned community. Swift sailing of the bill in LS has also diminished the blurred line between “moderate” and “hardened” Hindutva. Almost all “Secular Parties” including Congress surrendered. It is very dangerous that a wrongly created public perception about Instant talaq, became more important for political parties then realism and justice. Congress, for political reasons, did not allow its Muslim members to participate in the debate. There is no doubt that proposed law is aimed to destroy whatever was achieved by the “Muslim Women (Protection of Rights on Divorce) Act, 1986.”
After SC judgment, of August 2017, the status quo of a married wife will not change by uttering Talaq, talaq, talaq, by her husband but the Government seeks to make it a crime. Three years term for merely uttering three words, virtually with no legal effect on the marital status of the addressee, and will not be injurious physically or otherwise to anybody, speaks a lot on the wisdom and intention of the pioneers of the bill. And the Government asserts it intends to “Protect Rights” of a “married woman” by sending the caretaker and breadwinner of the family instantly to Jail.
Irrationality exposed
The Bill is totally irrational and so raises many questions. After SC judgment August 2017, abolishing legal validity of Instant Talaq, there was no rationale for a legislation. It should have been left on the courts to deal with the violators of SC order. There are enough laws on the statute books to deal with the defaulter. Also, there was no direction for the legislature to enact a law to criminalize the age old practice. The minority judgment by two judges, Hon. Chief Justice J.S. Khehar and Justice A. Nazeer was of the view that “Talaq e bidat” is valid under Muslim law and the right to follow personal law is an integral part of freedom of religion. But if parliament so wants, it may enact a law on it. This view was overruled by the majority judgment. Three honorable Judges of a bench of five ‘set aside’ triple Talaq as arbitrary and not part of Quranic guidance. As per rule the majority view constitutes the ‘law declared by the Supreme Court’. Therefore there was no room for another law except for political considerations. No Honorable Judge suggested to make triple Talaq a criminal act and to be punished. Making an act “Criminal”, means destroying the life the person forever. He will lose his service and will not get passport in life.
Erroneous Objective
“The Statement of Objectives and Reasons”, referred to some 100 cases of Triple Talaq even after SC judgment. Of course, due respect should be given to the law of the land, but it is unrealistic to expect 100 percent adherence by a community, largely kept backward. Muslims in India also do not live in isolation. They see fellow citizens elated and celebrating heinous crimes like gang rape of Dalit woman to punish, thrashing and lynching of the innocent and glorifying the murderers from that of the father of the Nation to the poor Afrajul. A day before the bill was introduced in, Mr. M I Shanavas, Congress M.P. raised the issue in LS of Afrajul’s killing. His voice met with stoic silence at treasury benches and dumb ears on the opposition. We do not intend to offend anyone but to stress upon the need to create an overall atmosphere of rule and respect of the law. That will require dealing with the criminals without ifs and buts, no biases and no pressure and keeping the law breakers away from the corridors of power. We assure our community leaders, intellectuals and social workers will not hesitate to co-operate. “Swach Bharat” should also focus on cleanliness of the minds and hearts by instilling respect to law and it will start from top to bottom.
Erroneous Concept
As Prof. Faizan Mustafa, (VC NALSAR Law University) indicated, it is also erroneous to expect that making some conduct punishable crime will stop people from indulging in. He pointed out, “As a matter of fact there is no relationship between the incidence of crimes and punishment. Even death penalty is not an effective deterrent. Murder, rape, robbery etc. since antiquity, are major crimes with heavy punishments but their rate has only been going up.”
As Radiance (10-16 Dec, 2014) reported (Is India turning into a “Crime State”?) there is sharp increase in rape cases even stringent law in place after Nirbhya case in Delhi. NCRB report recorded an increase of 12.4% from 34,651 cases in 2015 to 38,947 in 2016. An estimated 26 cases of rape occur every hour. While “Cases of triple talaq are rare and the practice is already on its way out.”
Dr. Faizan said, “Since triple talaq no longer dissolves marriage, its pronouncement is inconsequential and in no way adversely affects either the wife or the society and therefore it cannot and should not become a crime.” In Muslims Nikah is a civil contract. “A breach of the contract is a private wrong and therefore law provides for liquidated damages which are fixed by parties at the time of entering into contract” and “A crime is a violation of a general legal right which, if not controlled, will endanger peace and stability of society and therefore it is the state which prosecutes the accused and punishes the convict on behalf of entire society. The most universally assumed aim of the criminal law is averting harm.” “Triple talaq which does not dissolve marriage is not such a harm which can be declared as a crime.”
Inconsistencies
The bill passed by LS has many inherent inconsistencies. For example sec 5 makes the husband liable to pay maintenance, how will he do this if he is sent to jail and not allowed to work? Section 7 makes “Talaqe bidat” a cognizable and non-bail-able offence. It means police may push a Muslim woman to despairs by sending her husband in jail even if she makes no complaint. Suggestion for compensation for women in such cases, made by Mr. Asaduddin Owaisi, was shot-down in Lok Sabha.
Irrational Term
Three years jail term with fine is also arbitrary and irrational. There is no parity between uttering three non-consequential words and the heinous crimes that attract same punishment of three years jail with fine under IPC. For example: Section 124 A- sedition; Section 148 –armed rioting with deadly arms; Section 233- buying or selling instruments for minting counterfeit coins; Section 237- import and export of counterfeit coins; section 295A -malicious insulting of religion or religious beliefs of any class etc. are the crimes that attract imprisonment for three year with fine.
There are many other such grave crimes which attract lessor punishment of two years with fine. Sec 304 A- for causing death by rash and negligent act; Section 147 – for rioting; Section 153- one year jail for wantonly giving provocation with intent to cause riot and one year jail for cheating (Section 420) and so on.
Instant tlaq lesser evil
The prevalence of triple Talaq is lesser evil against women as their prevalence is as meager as 0.33 %  of all dissolution of marriage cases, as studied by Dr. Abu Saleh Shareef. In comparison to the cases of abandoned women without Talaq and widows in other communities is much high than in Muslims. Census of 2011 shows that the percentage of women staying in marriage is highest amongst Muslims (87.8%) compared to Hindus (86.2%), Christians (83.7%) and other religious minorities (85.8%).
The percentage of widowed women is least amongst Muslims (11.1%), thanks to re-marriage, compared to Hindus (12.9%), Christians (14.6%) and other religious Minorities (13.3%). It is likely that the culture of widow remarriages provides a higher level of family protection to Muslim women compared to women from other religious communities. The percentage of separated and abandoned women is also least amongst the Muslims (0.67%) compared to Hindus (0.69%), Christians (1.19%) and other religious Minorities (0.68%).
As Dr. Sharif noted, “Further, the issues relating to separated and abandoned women is much more serious than that of triple talaq. As per the last census, they are 2.3 million separated and abandoned women in India; in absolute terms, that is more than two times the number of divorced women. There are close to two million Hindu women who are abandoned and separated; this number is 2.8 lakh only for Muslims, 0.9 lakh for Christians and 0.8 lakh for other religions.”
If intention of Modi Government was to provide relief to women, she should have come out with a comprehensive scheme for all women, separated, abandoned or divorced irrespective of their religion. At one hand the Government claims not to divide nation in the Minority and Majority community and on the other hand brings a deceitful law for only Muslim Women, though their plight is insignificant in comparison of Hindu and other women.
As a commentator reflected, sending jail means, destroying the life, business and employment, as has been in thousands cases of alleged association with terror. Certainly the poorly-drafted and ill-intentioned piece of legislation and the way it was pushed; “shows the intellectual mediocrity and legislative inefficiency of the regime through. There was obviously no urgency, except for political reason for such haste.” (Advocate Shaheen Naqshbandi) Diverting public attention after poor show in Gujarat elections was on the mind, propriety of such a law is showed under clouds.
It may be concluded that the punishment envisaged in the bill is arbitrary and expression of misplaced mindset of pioneers of law. As of Naqshbandi noted, “this Bill is predatory in nature and it appears that it has been done with the sole motive of appeasing a section of people who have no interest in the welfare of Muslim women or Muslims in general.” (Curtsy ‘Radiance Weekly’ 07-13 January, 2017)
January 1, 2018



Wednesday, January 3, 2018

تین طلاق پر فوجداری قانون بلBill to Criminalise Triple Talaq

Half widows of Kashmir. Husbands disappeared 
تین طلاق پر فوجداری قانون بل
سید منصورآغا، نئی دہلی
گزشتہ ہفتہ’’تین طلاق پر فوجداری قانون کاجوازنہیں‘‘عنوان سے جب یہ کالم لکھا جارہا تھااس وقت تک بل کا مسودہ عام نہیں ہوا تھا۔28دسمبرکو بل لوک سبھا میں پیش ہوا اور آناًفاناً منظور ہوگیا۔ اب جب یہ کالم لکھا جارہا ہے، خبرہے کہ بل آج ہی راجیہ سبھا میں پیش ہوگا۔امکان ہے کہ سلیکٹ کمیٹی کو بھیج دیا جائے۔لوک سبھا میں بل کی مخالفت صرف ایم آئی ایم نے کی۔بعض پارٹیوں نے ووٹنگ میں حصہ نہیں لیا۔ کانگریس نے اگرچہ 3 سال کی سزا پر اعتراض کیا،لیکن بل کے حق میں ووٹ کیا۔یہ اثر ہے اس سیاسی ماحول کا جو ملک میں گزشتہ چند سال میں بنادیاگیاہے۔ ہمیں اپنا بھی جائزہ لینا چاہئے کہ اس میں ہماری بعض تحریکات کا بھی کچھ حصہ رہایا نہیں؟ حق حاصل کرنے کی کوشش حکمت کے ساتھ ہونی چاہئے یا ہنگامہ کرکے؟مسلم اقلیت سے متعلق قوانین کی تاریخ بتاتی ہے کہ ان کے لئے ہمارے دانشوروں،وکیلوں اورملّی قائدین نے پبلک جلسے نہیں کئے بلکہ ارباب حل وعقد سے سلسلہ بات چیت کا قائم کیااور ان کوقائل کرکے قوانین بنوائے ۔ ہماری کوشش اسی نہج پر ہونی چاہئے اورآئندہ شورکم مچایا جائے۔ 
ہندستانی قانون سازی کی تاریخ میںیہ پہلا بل ہے جس کی تیاری میں متعلقہ فرقہ سے کوئی مشورہ نہیں کیاگیا۔ بل لانے سے پہلے کوئی رسرچ نہیں کرائی گئی ۔یہ بل بالکل اسی اندازمیں لایا گیا جس طرح نوٹ بندی ہوئی ۔ بل مختصر ہے۔باب اول میں2دفعات ہیں جن میں حسب معمول بعض اصطلاحات کی تشریح ہے۔باب 2میں 2 دفعات 3و4ہیں۔ دفعہ 3 میں کہا گیاہے کہ ایک نشست میں اگر تین طلاق باطل اورغیرقانونی ہوگی۔دفعہ 4میں کہا ہے جو شخص اس طرح طلاق دیگا اس کو سزائے قید ہوگی جس کی مدت تین سال تک ہوسکتی ہے اورجرمانہ بھی۔باب3 میں3 دفعات 5،6اور7ہیں۔ دفعہ 5 میں کہا گیا ہے موجودہ قوانین کے علی الرغم جس عورت کو اس طرح طلاق ہوگی وہ اپنے شوہر سے گزارہ پانے کی حقدارہوگی جس کا تعین مجسٹریٹ کریگا۔دفعہ 6میں کہا گیا ہے کہ عورت کو حق ہوگا کہ اپنے نابالغ بچوں کواپنی تحویل میں لے لے۔ دفعہ 7میں کہا گیا ہے کہ ضابطہ فوجداری 1973کے علی الرغم اس قانون کے تحت قابل سزاجرم قابل دست اندازی پولیس ہوگا۔ گویا متاثرہ خاتون شکایت کرے نہ کرے، اطلاع پاتے ہی پولیس کو دخل دینے (ملزم کو گرفتارکرنے، اس کے خلاف ایف آئی درج کرنے اورمقدمہ دائرکرنے) کا حق ہوگا۔
تجزیہ: سپریم کورٹ 22اگست کے فیصلے میں طلاق بدعت کوپہلے ہی غیرقانونی قراردیا جا چکا ہے۔ دفعہ 3 میں اسی کی تکرار ہے۔عدالت کواورپارلی منٹ کویہ طے کرنے کا تواختیار ہے کوئی فعل ملکی قوانین اور آئین کے خلاف ہے اس لئے غیرقانونی ہے۔طلاق کے اس طریقے کو بھی غیرقانونی قرار دیاجاسکتا ہے۔لیکن باطل اس وقت تک نہیں ہوگا جب تک فقہااس کے بطلان کا فیصلہ صادرنہ کردیں اوروہ ہونہیں سکتا۔ تمام فقہااس رائے پر متفق ہیں کہ طلاق توہوجائے گی، چاہے کسی بھی حالت میں، کسی بھی ذریعہ سے اورایک بارکہی جائے یا تین یا زاید بار۔ اختلاف اس امرپر ہے کہ ایک نشست کی تین یازایدطلاق کو ایک مانا جائے، جس میں رجوع کیا جا سکتا ہے یا قطعی جس میں رجوع کی گنجائش نہیں ۔ 
غیرقانونی قراردئے جانے کا مطلب یہ ہوتا ہے کہ شوہر پر عورت اوراس کے بچوں کی جو ذمہ داریاں عائد ہوتی ہیں وہ برقرار رہیں گی۔ معروف ذمہ داریوں میں کھانا،کپڑا، علاج معالجہ، رہائش، بچوں کی تعلیم و تربیت ، جان ومال اورعزت وآبرو کی حفاظت سب شامل ہیں۔لیکن وہ شوہر ان ذمہ داریوں کے کیسے اداکریگا جس کو بغیرسماعت جیل بھیج دیا گیا۔ جب کہ قرآن نے طلاق کے باوجود دوران عدت عورت کو اوراس کے بچوں کو گھرسے نکال دینے سے روکاہے اورا ن کے ساتھ حسن سلوک کی تلقین کی ہے۔ عدت کے بعد رخصت اس لئے ہے کو وہ آزاد رہے،کسی اورسے نکاح کرنا چاہے تو کرلے، جس کو فضیلت حاصل ہے۔ چنانچہ اہل عرب میںیہی ہوتا ہے۔ایک بیوی کی موجودگی میں دوسری لانے پرقرآن کا حکم ہے کہ دونوں کے ساتھ یکساں سلوک کرو۔ اس لئے اسلام شوہر کو نہ صرف یہ کہ بیوی کی ضروریات زندگی کو پورا کرنے کی تلقین کرتا ہے بلکہ اس کی عزت نفس کی بھی حفاظت کرتا ہے۔ مجوزہ ایکٹ کی دفعہ 6میں3 طلاق کی صورت میں مروجہ قانون کے تحت جس گزارہ بھتہ کی بات کی گئی ہے، اس میں ایک خاتون اور اس کے نابالغ بچوں کی گزربسراورتعلیم وتربیت تو کیا ہوگی،گھر میں ایک بلی پلی ہوئی ہے تواس کی غذاکی بھی کفالت نہیں ہوگی۔خودسرکار نے ان کے لئے راحت مقرر کرنے کا مطالبہ مستردکردیا اورشوریہ ہے کہ مسلم خواتین کے حقوق کی حفاظت کردی ہے ،ان کو انصاف دلا دیا ہے۔
اس شق پر غورکیا جائے تومزیدپہلو سامنے آتے ہیں۔ مضحکہ خیز بات یہ ہے کہ طلاق بدعت کو اگرچہ غیر قانونی قراردیا جارہا مگر ساتھ ہی زوجین کے درمیان علیحدگی کی بناڈالی جارہی ہے۔وہ ساتھ رہنا بھی چاہیں تو نہیں رہ سکتے کہ شوہرجیل گیا اورمفاہمت کے دربندہوگئے۔ ہمارے کئی مسالک طلاق ثلاثہ کو ایک مانتے ہیں اور اکثر رجوع بھی ہوجاتا۔ اس قانون کے بعد تو پولیس ان کا مسلک نہیں دیکھے گی ،بس جیل بھیج دے گی۔ 
سزاکا جواز:دفعہ4میں تین ایسے بول بولنے پر جن کا کوئی قانونی اثرنہیں ہوگا، کسی کو کوئی ضرر نہیں پہنچے گا،3 سال کی سزاقطعی غیرواجب اورنامناسب ہے۔ تعزایرات ہند کے تحت 3 سال کی سزانہایت سنگین جرائم میں دی جاتی ہے۔مثلاًملک کے خلاف بغاوت (تعزیرات ہند کی دفعہ 148) ؛ فساد برپا کرنا اور اس میں ہلاکت خیز اسلحہ کا استعمال کرنا(دفعہ 148)؛ جعلی کرنسی بنانے کے آلات اور مشینوں کی خرید فروخت (233)؛ جعلی کرنسی کی امپورٹ ، ایکسپورٹ، خرید فروخت (237)؛ کسی مذیب ، مذہبی شخصیت یااعتقادات کے خلاف توہین آمیز باتیں کہناوغیرہ ،وہ جرائم ہیں جن پر ٹھیک وہی سزا مقرر ہے جو تین طلاق میں مجوزہ قانون نے تجویز کی ہے۔اوربھی کئی سنگین جرائم ہیں جن پر اس سے بھی کم سزاہے۔ مثلا دفعہ 304-A ،جس کے تحت لاپرواہی، جلد بازی یا غیرضروری زور آزمائی کی ایسی حرکت جس سے موت ہوجائے؛دفعہ 147فساد برپا کرنا یا اس میں حصہ لینا۔ ان جرائم پر صرف دوسال کی قید اورجرمانہ ہے۔ جب کہ دفعہ153،فرقہ ورانہ اشتعال انگیزی اور دفعہ 144،دھوکہ دہی جیسے جرائم کیلئے صرف ایک سال کی سزا اورجرمانہ ہے۔جیسا کہ گزشتہ ہفتہ عرض کیاتھا کہ سزا کی مدت جرم کے ہم پلہ دیگرجرائم کو پیش نظررکھ کر مقرر کی جاتی ہے۔ زیرتبصرہ بل میں یہ تعین کسی معقولیت کی بنیاد پر نہیں مسلم فرقہ سے مخاصمت کی بنیاد پر کیا گیا ہے۔ ہمیں کوئی شک نہیں کہ جو انتظامیہ اور سرکاراقلیت کے بارے میں غیرمنصفانہ روش میں جری ہے وہ اس ایکٹ کے تحت کاروائی میں کسی سمائی یا رواداری سے کام نہیں لیگی۔ اسی انتظامیہ کے تحت ہزاروں نوجوانوں کوبغیر کسی ثبوت کے دہشت گردی کے الزامات میں جیلوں میں بند کردیا گیا ہے۔ ہم سمجھتے ہیں لپ مسلم اقلیت کے ذہنوں میں خوف پیداکرنے کیلئے جو تدابیر دہائیوں سے کی جارہی ہیں، یہ ایکٹ بھی اسی کا ایک حصہ ہے۔ ورنہ اگرخواتین کو انصاف دلانے کی فکرمندی ہے توایسا نہیں کہ دیگرطبقوں کی خواتین مسلم خواتین کے مقابلے میں آرام سے ہیں۔ 
جرم اورسزا: مسلمانان ہند کاعام طورسے اس رائے پرمتفق ہیں کہ طلاق بدعت کا طریقہ سخت ناپسندیدہ ہے۔ رکنا چاہئے۔لیکن اس کیلئے قانون کی نہیں، معاشرے میں اصلاح اور بیداری کی ضرورت ہے۔ملت میں اس کیلئے فکرمندی پائی جاتی ہے اوراپنی سطح پر کچھ کوششیں ہوبھی رہی ہیں۔ لیکن یہ توقع فضول ہے کہ سپریم کورٹ کافیصلہ آتے ہی طلاق بدعت کو رک کوجانا چاہئے تھا یا یہ قانون بن گیا تو رک جائیگی۔ چوری ڈکیٹی، لوٹ مار اور قتل جیسے سنگین جرائم پر صدیوں سے سزائے موت کا قانون نافذ ہے، مگریہ جرائم بڑھتے ہی جاتے ہیں۔ اسی طرح عصمت دری کا معاملہ ہے۔ نربھیا کیس کے بعد سزاسخت کردی گئی ۔مگرپچھلے 3 سال میں اس میں 12.4 فیصد کااضافہ ہوا۔ سرکاری اعداد وشمارکے مطابق 2015میں عصمت دری کے 34,651 کیس ہوئے تھے جو 2016 میں بڑھ کر38,947 ہوگئے۔جبکہ تین طلاق کے کیس وزیرقانون کے مطابق ملک بھرمیں چارماہ میں صرف ایک سوریکارڈ کئے گئے۔
ہم اپنی ملت کے نوجوانوں کو مشورہ دیتے ہیں کو ہرحال میں قانون کالحاظ رکھیں۔ لیکن مشکل یہ ہے ملک کا مجموعی ماحول ایسا بنادیا گیا ہے جس میں قانون کا احترام جاتا رہا۔ لاقانونیت عام ہوگئی حد تو یہ ہے قاتلوں کو عزت کا مقام دیاجارہاہے۔ بابائے قوم کے قاتل کیلئے مندر اورافرازل کے قاتل کے حق میں عدالت پر بھگواپھہرایا جارہا ہے۔ اس کیلئے چندہ کیا جارہا ہے۔ بیف کے نام پر گھر سے نکال کرہلاک کردیا جاتا ہے اورسرکارجرم میں ملوث افراد کو منصب دے رہی ہے۔ آخر مسلمان بھی اسی معاشرے میں رہتے ہیں جس میں ان برادران وطن قانون کی دھجیاں اڑاتے اورچوڑا سینہ کرکے وزیربن جاتے ہیں۔ان کے مزاج میں قانون کا صدفیصد احترام کیسے ہو؟
مسلم اورغیرمسلم خواتین:تین طلاق کیس کے ضمن میں بدنیتی پر محمول جو شاطرانہ مہم چلائی گئی اس سے تاثرپیدا ہوتا ہے کہ خواتین میں مسلم خواتین ہی سب سے زیادہ مظلوم ہیں۔ 2011کی مردم شماری کا تجزیہ اس کی نفی کرتا ہے۔ مثلا بتایا گیا ہے کہ اسلام میں طلاق آسان ہونے کے باوجوشادی ان میں سب سے کم ٹوٹتی ہے۔ ڈاکٹرابوصالح شریف کی تحقیق کے مطابق بیوہ اوربناطلاق چھوڑی گئی غیرمسلم خواتین کا تناسب مسلم خواتین کے مقابلے زیادہ ہے۔ اس وقت ایسی بے سہاراہندوخواتین کی تعداد 23لاکھ سے زیادہ ہے، جب کہ مسلم خواتین کی تعداد صرف 2لاکھ80 ہزارکے قریب ہے۔ہم مسٹراسدالدین اویسی کی اس تجویزکی تائید کرتے ہیں کہ ہندو، مسلم کی فرقہ ورانہ تفریق کے بغیر سرکار ایسا قانون بنائے جس سے تمام بے سہاراخواتین کی دست گیری ہو۔ ایسی خواتین کی تعداد اچھی خاصی ہے جن کو بغیرطلاق کے چھوڑدیا گیا ہے۔ان کی فکربھی ہونی چاہئے۔ان میں مسلم خواتین کا تناسب سب سے کم ہے۔وہ خاندانوں سے نکال نہیں دی گئی ہیں۔ جبکہ ہندوخواتین برنداون، متھرا، وارانسی اور ہری دواروغیرہ میں بے بسی کی زندگی جی رہی ہیں۔
syyedagha8@gmail.com
9818678677

2017 رخصت ہوتے ہوئے کیسی دستک دے گیا؟ؒ تحریر سیدہ مہر افشاں2017 and challenges for Indian women, Relevance of Talaq Bill

2017 رخصت ہوتے ہوئے کیسی دستک دے گیا؟
سیدہ مہرافشاں
سنہ 2017کھٹی میٹھی یادوں اورکچھ زخموں کے ساتھ رخصت ہوا۔ کئی آزمائشیں آئیں ۔کئی نئی آزمائشوں کیلئے منظرنامہ صاف ہے۔ہمیں ہر آزمائش کے مقابلے کیلئے جذبات کو قابومیں رکھ کردانائی کے ساتھ خود کو تیاررکھنا ہے۔ وقت کبھی کسی کیلئے ٹھہرتا نہیں۔ کوئی وقت سے پہلے مرتا نہیں۔ کوئی کسی کے ساتھ مرتانہیں۔ زخم کوئی ایسا نہیں جو بھرتا نہیں۔ دواکرنا انسان کا فرض ہے۔جدوجہد رسول ﷺ کی سنت ہے۔ تقدیرکا فیصلہ اللہ تعالیٰ کرتا ہے۔ ہم ایمان کے دعویداروں کو توصبر اورشکر کے ساتھ اس کے فیصلوں کو قبول کرنا چاہئے۔صبراورشکر سے ہی ہمارا ایمان مکمل ہوتاہے۔صبر کا مطلب ہے خراب حالات کاحوصلہ کے ساتھ مقابلہ کرنااورجدوجہد کوجاری رکھنا۔ قرآن کہتا ہے:’’اللہ تعالیٰ کی ملاقات پر یقین رکھنے والوں نے کہا بسا اوقات چھوٹی سی اورتھوڑی سی جماعتیں، بڑی اوربہت سی جماعتوں پر اللہ کے حکم سے غلبہ پالیتی ہیں،اللہ تعالیٰ صبروالوں کے ساتھ ہے۔‘‘(البقرہ آیت 249)
اس سال میں جس طرح حالات بدسے بدترہوئے، نا انصافیوں کے درکھلے ،خصوصاً مسلم اقلیت کو ایسے حالات سے گزرنا پڑا جن میں ایمان کا دامن ہاتھ سے چھوٹتا نظر آتا رہا۔ لیکن ایمان کی طاقت اورعلم کی روشنی زندگی کو صبراوربرداشت سے جینا سکھاتی ہے۔ہجومی تشددمیں کئی لوگوں کی شہادت، لو جہاد کی تہمتیں، گھرواپسی جیسے ناٹک، گؤرکشا کا بے معنی مدعا اور چلتے چلاتے 28 دسمبر کو تین طلاق جیسے موضوع پر لوک سبھا میں منظورظالمانہ قانون ۔ اس سے سرکار کیا پیغام دیناچاہتی ہیے!اس کو ہرذی شعور انسان سمجھ رہا ہے ،چاہے وہ کسی بھی مذہب سے ہو۔ 
لیکن افسوس توہمیں اپنی ان نادان بہنوں پر ہوتا ہے جو ان فیصلوں پر خوش ہورہی ہیں اورآگے جو بند سرنگ ہے اس کا اندھیرانظرنہیںآرہا ہے۔ ان کی یہ خوشی، وقتی ہے اورخودفریبی ہے۔کیا عورت کا صرف ایک ہی روپ ہے، بیوی کا۔ اوروہ بھی ایسے مرد کی بیوی کا جس سے بنتی ہی نہ ہو؟ عورت کی زندگی صرف بیوی ہونے تک محدود نہیں ۔وہ ایک اچھی بیٹی، ایک اچھی بہن، اچھی ماں، ایک سلیقہ مند گھرکی منتظم اورایک استانی بھی ہوتی ہے۔ ان رشتوں کو نباہنے کے لئے عملی زندگی میں صبراوراعتدال پر قائم رہنا پڑتا ہے۔ 
جس طرح ہماے اللہ اوررسول ﷺ نے عورت ذات کوایک اعلیٰ مقام عطا کیا، اس کووقارسے زندگی گزارنے کا حقوق دیا۔جنت کو ماں کے قدموں میں بتایا اور والد کو جنت کی کنجی بتایا۔خوشنما زندگی گزارنے کیلئے قرآن کوہمارا رہنما بناکر اتارا۔ ہم اس کو چھوڑ کراگر خدابیزاروں کے فیصلوں پر خوش ہونگے تو مکمل اورکامیاب زندگی کیسے گزار سکیں گے!
بیشک طلاق ہو یا تین طلاق انتہائی تکلیف دہ اورافسوسناک ہوتی ہے۔ لیکن اس کے دوسرے پہلو پر بھی غورکرنا چاہئے۔ غصہ میں انسان کی عقل ماری جاتی ہے اورتین طلاق عام طورپر جن حالات میں کوئی مرد دیتا ہے وہ کوئی محبت کا لمحہ نہیں ہوتا۔ غصے کو ضبط بھی کرنا چاہئے اوراتنی سمجھداری عورت کو بھی دکھانی چاہئے کہ مرد کا غصہ اتنا نہ بھڑکے کہ شیطٰن خوش ہوجائے۔ شیطٰن سب سے زیادہ اپنے اس چیلے سے خوش ہوتا ہے جو میاں بیوی کے درمیان ناچاقی کراکے علیحدگی کرادے۔ وہ اس چیلے کو شاباشی دیتا ہے کہ تم نے بڑا کام کیا ہے۔
ہم عورتوں کی آزمائش اسی میں ہے کہ اگر شوہر بدمزاج ہے، یا غصہ میں ہے یا کوئی بدکرداری اس سے سرزد ہوئی ہے توہم جواب میں اپنی سخت کلامی سے وہ نوبت نہ آنے دیں جس سے جھلا کر شوہر ایک جھٹکے میں تین طلاق دے ڈالے۔ یہ مرد کا ایک کمزورپہلو ہے ۔ اگراس کا بیوی پر زورنہیں چلتا تو وہ طلاق دیکر اپنا زور دکھاتا ہے اورغصہ ٹھنڈا کرتاہے۔ دل توا س کا بھی بعد میں ملامت کرتا رہتا ہے کیونکہ طلاق سے صرف بیوی ہی نہیں چھٹتی، گرہستی برباد ہوتی ہے۔ گھرکا آرام اورچین رخصت ہوجاتا ہے اوربچے برباد ہو جاتے ہیں۔ان کی سرپرستی کیلئے باپ کی سرپرستی اورماں کی نگرانی دونوں کی ضرورت ہے۔
میں خود عورت ہوں۔عورتوں سے ان کاحال چال سنتی رہتی ہوں۔طلاق اورتین طلاق کے درد کو خوب سمجھتی ہوں۔ لیکن ہرتصویرکے دو رخ ہوتے ہیں۔ دوسرے رخ پر بھی غورکرنا ضروری ہے۔ شریف گھروں کے فیصلے چوراہوں اورچوپالوں میں نہیں ہوتے۔ گھرکے اندر برزگوں کے بیچ ہوتے ہیں جس سے گھرکا وقار اورہماری تہذیب برقراررہے۔ 
اگر شوہرکی بدمزاجی سے یا کسی اوروجہ سے عورت الگ ہونا ہی چاہتی ہے تو اس کو بھی خلع کا حق ہے ۔ وہ اپنے اس جائز حق کو استعمال کرسکتی ہے۔لیکن خلع تین طلاق کی طرح ایک جھٹکے میں نہیں ہوجاتا، جس کے بعد حلالہ کی تدبیر سجھائی جاتی ہے۔جس کیلئے ایک پاکبازعورت کواپناضمیرکچلنا پڑتا ہے۔ اگر ضمیر گوارہ نہیں کرتا توحلالہ کیلئے ہرگز آمادہ نہ ہو۔ عورت کوئی چائے کا کپ نہیں کہ کوئی بھی اس میں چسکی لے لے۔باقی زندگی چاہے ازدواجی سکھ کے بنا گزارے یا عمرتقاضا کرے تو دوسری شادی کرلے۔رہا بچوں کا سوال توایسے نالائق شوہر کی سمجھداری اس میں ہے کہ بچوں اوران کی ماں کی رہائش کابندوبست کرے۔ان کاپورا خرچ اٹھائے، لیکن عورت کی طرف کسی لالچ سے آنکھ اٹھا کر نہ دیکھے۔
لیکن مجوزہ قانون نے تو ایسے معاملے میں پورے گھرخاندان کو آگ لگانے کی ٹھان لی ہے۔اگر تین طلاق کی جھوٹی شکایت پر بھی شوہر گرفتارکرلیا گیا اورجیل بھیج دیا توکیا واپسی پر دونوں میں کبھی نزدیکیاں پیدا ہونگیں؟ کیا کبھی ایک چھت کے نیچے سکون سے رہ پائیں گے؟ کیا بچوں کی تعلیم اور تربیت ٹھیک سے ہو پائیگی؟ جیل کی مدت کے دوران میں اوراس کے بھی بعدکیا بیوی اوربچوں کی زندگی نارمل رہ پائے گی؟ بوڑھے والدین کس کے سہارے رہیں گے؟ کبھی کبھی تو کمانے والا بھی خاندان میں اکیلا وہی ہوتا ہے جو جیل بھیج دیا گیا۔اوریہ بھی ضروری نہیں جیل سے آئیگا تورس ملائی کی طرح میٹھا ہو کرآئے۔ اس صورت میں کیا ہوگا؟ اوراگرشوہر عدالت کے فیصلے کے باوجود خرچہ نہ دے تو عورت کب تک عدالتوں کے چکرکاٹتی اوروکیلوں کی جیب بھرتی رہے گی؟
سال 2017کئی زخموں کے ساتھ پیچیدہ سوالوں میں الجھا ہواچھوڑ کر گزر گیا۔ ہم اس سرکار کی نیت پر کیسا بھروسہ کریں، جس نے قوم کی تمام پریشان حال عورتوں کیلئے کچھ نہیں کیا۔ لاکھوں ہماری ہندو بہنیں بے سہارا ہیں۔ خودوزیراعظم میں اپنی بیوی کو مدت سے چھوڑرکھاہے۔ فکرہماری ان بہنوں کی بھی کرلو۔لوک سبھا میں تالیاں بجاکرعجلت میں فیصلہ کرکے خوش ہونے والے لگتا ہے اس قانون کو نافذ کرکے عورتوں کے سارے مسئلوں کو حل کردیں گے۔مسئلہ تین طلاق پر ہی ختم نہیں ہوگا۔ آج یہ ہے ، کل کسی اور موضوع کوگرماکر دعوا کریں گے کہ ہم نیا اتہاس بنارہے ہیں۔
جہاں تک تین طلاق کا معاملہ ہے ، یہ سخت نادانی، زیادتی اور حماقت ہے۔ جو کام غلط ہے، قرآن نے جس کو کوئی جگہ نہیں دی،رسول ﷺ نے جس پر ناراضگی جتائی، وہ شریعت کا حصہ کیسے ہوسکتا ہے؟ہم اس کو صحیح نہیں کہہ سکتے۔
یہ بات اس سے پہلے بھی لکھی گئی ہے کہ گھریلو مسائل کورٹ کچہری سے حل نہیں ہوتے۔ ہمیں پورے ہندستانی معاشرے میں پھیلی ہوئی برائیوں کو ختم کرنا ہوگا۔ عورتوں کے ساتھ گھروں میں زیادتیوں کوختم کرناہوگا۔تاکہ جوآج کسی ایک مرد نے اپنی بیوی کے ساتھ کیا، آگے چل کراس کا بیٹا یا بھائی ایسا نہ کرے۔ آج جو لوگ مسلمان خواتین سے ہمدردی دکھا رہے ہیں کیا ان کو وہ عورتیں نظرنہیں آتیں، جن کو بنا طلاق چھوڑدیا جاتا ہے۔ ان کو نہ مہرملتا اورنہ خرچہ پانی، جب تک دل چاہا نچوڑا اورجب دل چاہا چھوڑدیا۔ بیوہ کی دوبارہ شادی کی بات تو دوررہی ایسے بھی رسم ورواج ہیں کہ اگرکوئی عورت مر جائے تومرد کی دوسری شادی کو براسمجھتے ہیں۔ہاں ناجائز تعلق منظور ہے۔ بیوہ عورت کاخوشی کے موقع پرشریک ہونا بھی اپ شگن سمجھا جاتا ہے۔ ان کو گھرمیں رکھنا بھی پسند نہیں کیا جاتا ۔ بیچاری ورنداون، کاشی اورمتھرامیں زندگی گزارکر چل بستی ہیں۔ اس کے برخلاف حرام کرنا آسان ہے۔ ایک بیوی میں گھرکے کئی مردشریک ہوجاتے ہیں۔ آستھا کے نام پر ڈھونگی بابا اور بچاری زنا کوجائز کرلیتے ہیں۔ ایک دوکے پکڑے جانے سے یاسزا سے گناہ میں کمی نہیں آتی۔جگہ جگہ دوکانیں کھلی ہیں۔ صبح سے شام تک کتنی لڑکیاں ان کے چنگل میں پھنس کرہوس کا شکاربن جاتی ہیں۔ کتنی ہی لاڈلی بیٹیاں جہیز کی بھینٹ چڑھ جاتی ہیں۔ قانون ہونے کے باوجود انصاف نہیں ملتا اورامید کی آس لئے کورٹ کچہری کے چکرکاٹتے کاٹتے کتنے والدین کی انکھیں پتھراجاتی ہیں ، عورتیں بوڑھی ہوجاتی ہیں۔ بس پیسہ ضائع ہوتا ہے، انصاف نہیں ملتا۔ پورے سماج میں عورتیں، کسی بھی مذہب سے تعلق رکھتی ہوں، روز روز کورٹ کے چکر نہیں کاٹ سکتیں۔ انصاف ملنے کی ایک مدت مقررہو۔ ہرسماج کی عورت کیلئے انصاف کا قانون ہو۔ سماج میں ترقی تبھی ہوگی جب عورت ذات کو اس کا حق اورانصاف ملے گا۔جو بھی قانون عورت یامرد کے لئے بنے اس کو بنانے والوں کو بھی عمل میں لانا ہوگا۔ ورنہ وہ ایک چھلاوے سے زیادہ کچھ نہیں۔ 
میری التجا ہے کہ ہماری قوم کے رہنماؤں کوآگے آکراورایمانداری سے سلجھانا چاہئے۔ مسلکوں میں نہ بٹ کران مسئلوں کو ایک ہی راستہ پر چل کر حل کرناچاہئے اوروہ ہے قرآن اورسنت کی روشنی اوراسی میں ہم سب کی بھلائی ہے۔ جناب منظربھوپالی کے اس شعر کے ساتھ اپنی بات ختم کرتی ہیں۔ 
اب آسمانوں سے آنے والا کوئی نہیں ہے
اٹھو کہ تم کوجگانے والا کوئی نہیں ہے
محافظ اپنے ہوآ پ ہی تم یہ یاد رکھو 
پڑوس میں بھی بچانے والا کوئی نہیں ہے۔
9810380879

Thursday, December 28, 2017

تین طلاق پر فوجداری قانون کاجوازنہیں Why make Truple Talaq is a criminal Offence

سید منصورآغا، نئی دہلی
دوہی مہینہ کے اندرمودی سرکار کویہ یقین ہوگیا کہ سپریم کورٹ نے تین طلاق کو خلاف قانون قراردینے کا جو فیصلہ ماہ اگست میں صادر کیاتھا، اس پرعمل نہیں ہورہا ہے، حالانکہ ابھی کوئی کیس عدالت میں نہیں پہنچا۔ بل لانے سے پہلے انتظارکرنا چاہئے تھااوردیکھنا چاہئے تھاکہ عدالتیں موجودہ قوانین کی روشنی میں سپریم کورٹ کی اس رولنگ پرکس طرح عمل درامد کراتی ہیں۔لیکن سرکارکوعجلت ہے کہ طلاق بدعت کو جوقطعی سول معاملہ ہے ، فوجداری بنادیا جائے اور تین بار طلاق کہہ دینے والے کو،وہی تین سال کی سزادی جائے جوموجودہ قانون میں ملک سے بغاوت کے مجرم کو دی جاتی ہے۔ 
شادی ایک سول معاہدے ہے، جس میں مرد کے اوپر بیوی اوربچوں کی کفالت کی ذمہ داری عائد ہوتی ہے، جب کہ بچوں کی پرورش اورگھر گرہستی کی نگرانی و نظم عورت کاذمہ ہے۔ ہندستانی معاشرے میں عام طور پر ایسا ہی ہوتاہے لیکن بعض حالات میں خواتین معاش میں ہاتھ بٹاتی ہیں اورنکھٹومردوں کو نباہتی ہیں۔ اس نظام میں مسلم اور ہندوخاندانوں میں کوئی فرق نہیں۔ فرق یہ ہے کہ اگر خدانخواستہ زوجین میں کوئی ناچاقی ہوجائے تو بعض شرائط کے ساتھ مسلمانوں میں طلاق کا شرعی قانون موجود ہے ،جب کہ غیرمسلموں میں طلاق کا کوئی تصور نہیں۔ اب جوان میں طلاق ہوتی ہے وہ رسم ورواج اورمذہبی اصولوں سے آزاد ہے۔ المیہ یہ ہے کہ ہمارے قائدین انھی لوگوں سے ’شریعت‘ کی حفاظت کی گزارش کر رہے ہیں، جو خود اپنے مذہبی قوانین پر قائم رہنا اہم نہیں سمجھتے!
سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعدبات صرف اتنی رہ جاتی ہے کہ اگرکوئی شخص اپنی بیوی کو تین طلاق دیتا ہے، تو بیشک مفتی کی نظرمیں طلاق واقع ہوجائیگی اوربیوی شوہرپر حرام قرار پائے گی۔ لیکن سر زمین ہند پر اس ’طلاق‘ کا کوئی قانونی اثرنہیں ہوگا۔بیوی (یاسابق بیوی) اور اس کے بچوں کی کفالت کی ذمہ داری مرد پر برقراررہے گی۔ اب اگرکوئی شخص ان ذمہ داریوں کو ادا نہیں کرتاتویہ سول معاملہ ہوگا۔ عدالت مردسے بیوی کا حق دلوائے گی۔یہ وصولی مرد کی جائداد یا آمدنی سے کی جاسکتی ہے۔اس صورت میں نہ تو پولیس کا دخل ہوگا اورنہ جیل کی سزا۔لیکن ہماری سرکار چاہتی ہے کہ سپریم کورٹ کے حکم کے خلاف ایک وقت میں تین طلاق دینے والے مرد کو ’مجرم‘ قراردیکر جیل بھیج دیا جائے ۔اس کی ضمانت بھی نہ ہو۔ اس کا نتیجہ یہ ہوگا کہ اس کی نوکری جاتی رہیگی ۔اگر کاروبارکرتا ہے تو وہ ختم ہوجائیگا۔ایسی صورت میں اس بیوی اور بچوں کی کفالت کاذریعہ کیاہوگا؟ گویا وہ سہارا ہی ختم ہوجائے گا جو سپریم کورٹ کے فیصلے سے تین طلاق کی ماری خاتون کو قانوناًحاصل ہوگیا ہے۔ کیا ایسی صورت میں سرکاران کی کفالت کریگی؟نہیں۔جو سرکارسرحد پرنگرانی کے محافظ فوجیوں اور ڈیوٹی کے دوران مارے جانے والے سرکاری عملے کے بچوں کی کفالت کی ذمہ داری نہیں لیتی وہ مطلقہ مسلم خاتون کی کیالیگی ؟ صاف ظاہر ہے کہ خاطی مرد کوجیل بھیج دینا اس کے ظلم کی ماری خاتون اور اس کے بچوں کے لئے کسی راحت کا نہیں بلکہ مصیبت کاسبب ہوگا۔ کیا سرکار مسلم خواتین کے مدد اسی طرح کرنا چاہتی ہے؟
وزیر قانون روی شنکر پرساد نے مجوزہ بل کے مقاصد میں طلاق بدعت کیس میں مسلم پرسنل بورڈکے بیان حلفی کا حوالہ دیا ہے کہ یہ معاملہ کیونکہ ایک مذہبی رواج کا ہے، اس لئے عدالت اس میں دخل نہیں دے سکتی البتہ اگر پارلیمنٹ قانون بناسکتی ہے۔قرارداد مقاصد میں سپریم کورٹ کوبورڈ کی اس یہ یقین دہانی کابھی حوالہ ہے کہ وہ خود طلاق بدعت سے باز رکھنے کے لئے مہم چلائے گی، مگرگزشتہ پانچ ماہ میں کوئی پہل نظرنہیں آئی۔ اس کیس کے دوران اس کالم نویس نے اوربعض دیگرافراد نے بورڈ کویہ مشورہ دیا تھا کہ از خود ایک بل کا مسودہ تجویز کرے۔لیکن بورڈ نے توجہ نہیں فرمائی۔چنانچہ سرکار نے آنافاناً بل پیش کردیا جس میں تین طلاق کو ناقابل ضمانت فوجداری جرم بناکر، تین سال تک کی سزااورجرمانہ تجویز کیا گیاہے جس کاخیرمقدم کانگریس نے بھی کر دیا ہے۔
ہرچند کہ ملک کے سامنے اہم مسائل بہت ہیں لیکن اس معاملہ میں سرکار شاید عجلت اس لئے ہے کہ 2019 کے پارلیمانی چناؤ سے پہلے 8 اسمبلیوں کے چناؤ میں اس اشو سے فائدہ اٹھاجائے۔ وکاس اور گجرات ماڈل کی ہوانکل چکی۔ اس لئے عوام کو یہ احساس دلانا مفید ہوگاکہ ہم نے مسلم سیاسی لیڈروں کے بعد نیم سیاسی مذہبی لیڈروں کوٹھکانے لگانے کاوہ کارنامہ انجام دیدیا ہے جو کانگریس 70برس میں نہیں کر سکی۔ اب آپ ’’ہائے تین طلاق، شریعت میں مداخلت‘‘ کا جتنا شوراٹھائیں گے اتنا ہی بھاجپا کے لئے ماحول سازگارہوگا ۔ اس کاسلسلہ تواسی وقت شروع ہوگیا تھاجب ہمارے قائدین نے ایک سیاسی تحریک چلائی تھی۔ اللہ اس ملت کی حفاظت فرمائے۔ جذباتیت سے بالاسیاسی شعور سے نوازے۔ یہ جواحتجاجی جلسوں اور ہربات کو میڈیا میں لے دوڑنے کی للک ہوگئی ہے،وہ موجودہ ماحول میں ہماری مددگارنہیں ، نقصان دہ ہے مگر خود نمائی کاشوق بری بلا ہے۔
موجودہ میں ضرورت اس بات کی ہے کہ یہ جائزہ لیا جائے کہ تین طلاق کو فوجداری کا معاملہ بنا دینا کہاں تک ہمارے قانونی فلسفہ اوراس کی اساس سے ہم آہنگ ہے یانہیں۔ جمہوری ،آئینی نظام میں قانون سازی میں حکمراں کی مرضی نہیں چلتی بلکہ اس کو کچھ پیمانوں کے مطابق ڈھالناہوتا ہے۔مثال کے طوراگرملک سے بغاوت کی سزا تین سال ہے تو تین مرتبہ طلاق، طلاق کہہ دینے سے، جس کا کوئی قانونی اثر نہیں ہوگا، تین سال کی جیل کیسے مطابقت کرے گی۔ جرم کے سزاایک فریم ورک میں اس سے مثل جرم سے مطابقت کے بغیر جائز نہیں۔
ڈاکٹرفیضان مصطفٰی نے، جو نلساریونیورسٹی حیدرآباد کے پرنسپل ہیں اپنے ایک آرٹیکل "Why Criminalising Triple Talaq is Unnecessary Overkill" میں اس مسئلہ کا تفصیل سے جائزہ لیا ہے۔ ذیل میں ہم اس کے ابتدائی نکات کے حوالے سے چندباتیں عرض کریں گے۔جیسا کہ اوپر ذکر آیا،شادی دوفریقوں کے درمیان ایک سول معاہدہ ہے اورسول معاہدے کی خلاف ورزی کی صورت میں عدالت وہی معاوضہ دلاتی ہے جو معاہدہ میں(نکاح کی صورت میں نکاح نامے میں )مقرر ہو یا بصورت دیگر عدالت مناسب سمجھے۔ فوجداری معاملہ تب بنتا ہے جب جرم پورے معاشرے کے لئے مہلک ہوتا ہے۔ اسی لئے ریاست کو اس جرم کی سزا مقررکرنے اور عدالت سے اس کو نافذ کرانے کا اختیار ہے، تاکہ اس کی مجرمانہ ذہنیت سے کسی اورکو نقصان نہ پہنچے۔کس جرم کی کتنی سزادی جائے، اس کا تعین جرم کی نوعیت اورشد ت سے کیا جاتا ہے۔ یہ نہیں اپنی سیاسی ضرورت کے تحت معمولی معاملہ میں سنگین سزادیدی جائے اورخطاکار کو تباہ کردیا جائے۔اس پہلو پر روشنی،زندگی بخیر توآئندہ ہفتہ ڈالی جائے گی۔
فوجداری اورسول کیس میں ایک بڑافرق یہ ہے کہ فوجداری میں ایک دن کی سزا یا ایک روپیہ جرمانہ بھی تباہ کن ہوتاہے۔ مجرم قرارپاتے ہی، ملازمت جاتی رہتی ہے۔ پاسپورٹ ضبط ہو جاتا ہے۔ لیکن سول معاملے میں ایک کروڑ کا جرمانہ بھی ایسا مہلک نہیں ہوتا۔ چنانچہ اگرتین طلاق کو فوجداری معاملہ بنایاگیا،توگویا سزایافتہ توتباہ ہوگیا۔ (اور شاید سرکار کا یہی مقصد ہے۔ جس سرکارنے ہزاروں کے تعداد میں نوجوانوں کو دہشت گردی کے جھوٹے الزام میں ملوث کرکے تباہ کردیا۔اس سے کچھ بعید نہیں کہ کچھ بھی کرگزرے۔)
دوسرے یہ کہ قانون اسی فعل کو جرم قراردیتا ہے جواخلاقی طور سے غلط اور معاشرے کے لئے مضر ہو۔ کوئی حکومت آنافانا یہ طے نہیں کرسکتی کہ جو عمل صدیوں سے چلاآتا ہے ،وہ اب اچانک قابل سزا ہوگیا ہے۔ سپریم کورٹ نے بھی یہ نہیں کہا کہ تین طلاق قابل دست اندزی پولیس ہوگی۔مودی سرکار سپریم کورٹ کی پانچ رکنی بنچ کے جس فیصلہ کے بہانے سے یہ بل لارہی ہے ،اس کے پانچ میں سے دوججوں (چیف جسٹس جے ایس کیہیر اورجسٹس عبدالنظیر)کی رائے یہ تھی کہ تین طلاق مسلم قانون کے تحت جائز ہے۔ عدالت اسے نہیں روک سکتی۔البتہ پارلی منٹ چاہے توقانون بناکر اسے کالعدم کردے۔ فیصلے کو پڑھ لیجئے۔ اس میں کہیں تین طلاق کو جرم قرار دینے کی تجویز یا ذکر نہیں۔ اسی بنچ کے تین ججوں نے، جن کا فیصلہ اکثریتی اوربائنڈنگ (لازم) ٹھہرا، اس رائے سے اتفاق نہیں کیا اور طلاق ثلاثہ کوآئین کے دفعہ 141سے متصادم قرار دے کر غیرقانونی ٹھہرادیا۔ اس اکثریتی فیصلے سے وہ مقصد از خود پوراہوگیا جو اقلیتی فیصلے میں پارلیمنٹ پر چھوڑاجارہا تھا یا جو بات پرسنل لاء بورڈنے سپریم کورٹ میں کہی تھی۔اس لئے ازروئے فیصلہ ہذااب پارلیمنٹ کوقانون لانے کی ضرورت نہیں رہ گئی۔ قانون کی روسے اب طلاق ثلاثہ بے اثرہوچکی ہے ۔نئے قانون کی ضرورت نہیں۔
حکومت کی یہ دلیل درست نہیں کہ سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعددوماہ میں تین طلاق کے 67 (یا اب تک ایک سو)کیس ہوچکے ہیں،(گویا اوسطاً سالانہ 402)اس لئے قانون کی ضرورت ہے۔ فیصلہ صادر ہونے کے بعد صرف دوماہ کا وقت عوام کا شعور بیدار کرنے کے لئے کافی نہیں۔ چوری ، ڈکیتی اورزنا جیسے کتنے معاملوں میں سخت سزاکے قانون کو مدت گزرگئی مگرجرم رکنے کا نام نہیں لے رہے۔تازہ واقعہ ہے، عصمت دری کے خلاف سخت قانون کا ہے جواپریل 2013 میں نافذ ہوا۔ لیکن نیشنل کرائم ریکارڈ بیوریو کی رپورٹ بتاتی ہے کہ اس قانون کے بعد بھی ہر سال اسطاً 24,923 (فی گھنٹہ 26)کیس ہورہے ہیں۔ شکارہونے والی خواتین میں 7,200 نابالغ بھی ہیں۔ یہی معاملہ دیگرجرائم کا ہے۔( ہماری سرکار کو تین طلاق کے اوسطا 402کیس سالانہ کی توفکر ہوگئی ، جس میں ویسی ذلت، ذہنی کرب اور سماجی تباہی نہیں ہوتی جیسی عصمت دری میں ہوتی ہے لیکن سنگین جرائم کو روکنے کی کوئی فکر نہیں) ۔سرکار کروڑوں روپیہ اشتہارات پر خرچ کرتی ہے،لیکن سپریم کورٹ کے فیصلے سے عوام کو باخبرکرنے کے لئے کیا کیا؟ جب کہ مسلمان خوداصلاح کے لئے سرگرم ہیں۔ جماعت اسلامی ہنداور جمعیۃ علماء ہندنے مسلسل بیداری مہم چلاررکھی ہے۔ اخباروں میں بھی لکھا جارہا ہے۔ اور یہ سمجھنے کی کوئی وجہ نہیں انکاپیغام بے اثررہے گا۔)
طوالت کی وجہ سے آج بس اتنا ہی۔ بعض دیگراہم نکات انشاء اللہ آئندہ ہفتہ ۔ اس وقت قارئین محترم کو یہ پیغام پہنچانا ہے کہ جو کام ایک طلاق سے ہو سکتا ہے اس کے لئے ایک سانس میں تین کی کیا درکار ہے اورکیوں اس کو برقراررکھنے پر اصرار ہے؟اگر مجبوری ہی ہے اور مفاہمت کے دروازے بند ہوچکے ہیں توپھر ایک طلاق دیکر علیحدہ ہوجائیے اور مطلقہ خاتون کے ساتھ ویسا ہی حسن سلوک کیجئے جس کی ہدایت اللہ کے رسولﷺ نے فرمائی ہے ۔ یہ سارا عتاب اس لئے آرہا ہے کہ ہم نے اپنی نادانی سے اسلامی تعلیمات کو پارہ پارہ کر دیا ۔ جتنے پر جی چاہا عمل کرلیا، جتنا چاہا چھوڑ دیا۔یہ رویہ غلط ہے۔ طلاق دینی ہی ہے تو طلاق احسن ہزار خرابیوں سے بچاتی ہے اورطلاق بدعت ہزارہا برائیوں میں مبتلا کرتی ہے ان میں ایک حلالہ بھی ہے۔ 

Saturday, December 23, 2017

گجرات چناؤ: سیاسی ماحول میں تبدیلی کی دستک Gujarat Elections indicate change in political environment

گجرات چناؤ: سیاسی ماحول میں تبدیلی کی دستک
سید منصورآغا، نئی دہلی
بھاجپا کامیڈیانظام ایساچست وچالاک ہے کہ اپنی زرا سی کامیابی کا ڈنکا زور، زور سے پیٹتا ہے اوراپنی ناکامیوں کو ایسے چھپا لیتا ہے جیسے کائی تالاب کے پانی کوچھپا لیتی ہے۔اترپردیش کے حالیہ بلدیاتی چناؤ میں اپنے14 میئر چنے جانے کا ڈنکا اس زورسے بجایا کہ لوگوں کو پتہ ہی نہیں چلاکہ اس کے آدھے سے زیادہ امیدواروں کی ضمانتیں ضبط ہوگئیں۔ اب ہماچل پردیش اورگجرات کے اسمبلی چناؤ میں بھی اس نے یہی کمال دکھایا ۔مثلاً یہ بات چھپالی کہ ہماچل میں پارٹی کے وزیراعلیٰ کے نامزدامیدورار پریم کماردھومل چناؤ ہارگئے ہیں اورگجرات میں کانگریس نے بھاجپا سے 33سیٹیں چھین لی ہیں۔
بھاجپا کا کمزورپہلو
ہماچل میں سابق وزیراعلیٰ مسٹر دھومل سجانپورحلقے میں ایک نوجوان کانگریسی امیدوارراجندر راناسے 3500 ووٹوں سے ہارگئے۔اس پررانا نے مسٹر دھومل کاشکریہ یہ کہتے ہوئے اداکیاکہ وہ میرے سیاسی گروہیں ۔سیاست کے داؤپیچ ان سے ہی سیکھے۔ مسٹرمودی اورامت ساہ، دونوں نے انتخابی مہم کے دوران نہ صرف یہ کہ دھومل کو وزیراعلیٰ کے منصب کیلئے پیش کیا تھا، بلکہ ان کی شان میں قصیدے بھی پڑھے تھے۔
ادھرگجرات میں اگرچہ182رکنی ایوان میں بھاجپا نے99سیٹیں جیت کر اکثریت حاصل کرلی ہے لیکن مودی جی کے پورازورلگانے اورافواہیں پھیلائے جانے کے باوجود سابق کے مقابلے اس کے 16ممبرکم ہوگئے ۔جبکہ بڑبولے امت شاہ کااعلان تھا کہ اس بارنشانہ 150 سیٹوں کا ہے۔ وہ اس نشانے سے 51سیٹ پچھڑگئے اور کوئی حربہ کام نہیںآیا۔اس ناکامی پر شرمندہ ہونے کے بجائے وہ فتح کا جشن منارہے ہیں۔اتناہی نہیں ریاست میں بھاجپا کا ووٹ شیئر جو2014کے لوک سبھا چناؤ میں تقریباً60فیصد تھا گرکر49فیصدرہ گیاہے۔ گزشتہ تین سال میں 11 فیصد کی یہ کمی اہم ہے۔(مودی جی کا یہ بیان غلط ہے کہ پارٹی کاووٹ شیئر بڑھا) ظاہر ہے کہ یہ مودی سرکار کی پالیسیوں اور وعدوں کے عدم وفا کا نتیجہ ہے۔ اگرچہ فرقہ پرستی کا وہ خمار ابھی باقی ہے جو 2002 اور اس سے ماقبل دورمیں پیداکیا گیاتھا،مگر نئی نسل کے نظریہ میں تبدیلی آرہی ہے۔ہرچند کہ سنگھ کا دعوا ہے کہ وہ سارے ہندوؤں کو جوڑنا چاہتاہے لیکن اس کی ماڈل ریاست میں کیاہورہا ہے؟گجرات میں پیشوں اوربرادریوں کی سیاست اپنا رنگ دکھا رہی ہے۔
کانگریس کاووٹ شیئر 
بھاجپا کے برعکس کانگریس کاووٹ شیئر جو 2014کے چناؤ میں صرف 33فیصدرہ گیاتھا، بڑھ کر 41.4 فیصد ہوگیا ہے۔یہ شیئر اوربڑھ سکتا تھااگر پارٹی کاتنظیمی ڈھانچہ مضبوط ہوتا اور ورکرعوام کے ساتھ رابطے میں ہوتے۔ ابتدائی طورپر جو اعداد وشمار آئے ہیں ان سے ظاہرہورہاہے کہ کانگریس اوربھاجپا کے ووٹ شیئر میں سابق کے مقابلہ فرق لگاتارکم ہواہے۔2002کے فوراً بعد چناؤ میں اگرچہ فرقہ ورانہ گول بندی زبردست تھی ،لیکن بھاجپا اورکانگریس کے ووٹ شیئر میں فرق 10.4فیصد کاتھا،جو2007میں گھٹ کر 9.49 فیصد اور 2012میں9فیصد ہو گیا۔ 2014کے لوک سبھا چناؤ میں ، جب مودی کا جادو سرچڑھ کر بول رہا تھا اور مفت میں 15-20لاکھ کھاتے میں آجانے کے لالچ میں لوگ بہک گئے تھے ،تب گجرات میں یہ فاصلہ 30فیصدہوگیا تھا۔اب 2017 میںیہ فرق 2012سے بھی کم ہوکر 8.57فیصدر ہ گیا ہے۔ کانگریس کے ممبران کی تعداد بھی 51سے بڑھ کر 80ہوگئی ہے (بشمول3 آزادممبران جن کی کانگریس نے تائید کی۔) اور یہ اس صورت میں ہواکہ کانگریس ایسی 16سیٹیں ہارگئی جو گزشتہ اسمبلی میں اس کے پاس تھیں۔ اگریہ سیٹیں ہاتھ سے نہ جاتیں تواس کے 96 ممبرہوتے اورسرکار بنالیتی۔ اب بھی 218کے ایوان میں 80 کا اپوزیشن کمزور نہیں ہوتا۔ بشرطیکہ ممبران بک نہ جائیں۔ملک کواگرفاشزم سے بچاناہے توکانگریس کو نوجوان دلت اور کسان ممبران کواہمیت دے کر ساتھ رکھنا ہوگا اوران کے ساتھ مل کر عوامی مسائل پر کام کرنا ہوگا۔تاکہ اتحاد مضبوط ہواورعوام کے ساتھ رابطے میں رہے۔کوئی لاپرواہی یا عیاری نہیں چلے گی۔
کانگریس کی مقبولیت
لیکن کسی کویہ غلط فہمی نہیں ہونی چاہئے کہ ووٹ شیئر اورسیٹوں میں یہ اضافہ کانگریس کی مقبولیت کی بدولت ہے۔ ہرگز نہیں۔ کانگریس نے کوئی ایسی مہم نہیں چلائی جس سے عوام میں اس کا رسوخ بڑھتا۔ وہ ستیہ گرہ ، شرم دان ، پربھات پھیری اورجلسے جلوسوں کی سیاست بھول گئی۔ اب سارے لیڈر اپنے ایرکنڈیشنڈ کمروں میں ڈرے سہمے سے بیٹھے ہیں۔ان کو سمجھنا ہوگا کہ اب وہ زمانہ نہیں جب نہرو اور اندرا گاندھی کی آوازپر عوام گھروں سے نکل آتے تھے۔ اب تومودی کی ’کرشماتی‘ شخصیت کے باوجودبھاجپا کے کارکن سنگھ کی سربراہی میں پورے پانچ سال مختلف عنوانات سے عوام کے قریب جاتے ہیں، مختلف مہمات چلاتے ہیں اوربوتھ اسکوائڈ بناکرایک ایک ووٹر کوبوتھ تک پہنچاتے ہیں۔ دراصل کانگریس کو فائدہ مقامی نوجوان کاشتکارو دلت لیڈروں کی تحریکات کا پہنچاہے، جنہوں نے عوامی سطح پر غنڈہ گردی اورناانصافیوں کے خلاف مہم چھیڑی اورچناؤ میں کانگریس کو ان کی سپورٹ مل گئی۔انہی نوجوانوں نے رائے دہندگان کو بوتھ تک پہنچانے اورووٹ ڈلوانے کاکام کیا۔ گجرات میں کیا، پورے ملک میں کانگریس کی تنظیم ملیامیٹ ہوگئی۔ کانگریس میں پیدل ورکروں کی قدرجاتی رہیہے۔چنانچہ بہت سے مستعد ورکر دیگرپارٹیوں میں چلے گئے۔کانگریس ریاستوں میں نوجوان قیادت کھڑی کرنے سے ہچکچاتی ہے۔ حالانکہ انتخاب میں کامیابی کے لئے مقامی مسائل پرعوامی تحریکات کھڑی کرتے رہنے کی سخت ضرورت ہوتی ہے۔ دہلی میں بیٹھ کر پریس کانفرنس کرلینا کافی نہیں۔مودی کی کارکردگی سے عوام میں بیشک مایوسی ہے۔اس کو ووٹ میں تبدیل کرنے کے لئے ایسی تحریک کی ضرورت ہے جیسی انا ہزارے کو مہرہ بناکر سنگھ نے چلائی تھی۔ 
گجرات الیکشن کے نتیجہ میں کانگریس کو ایک موقع ملا ہے کہ وہ مستعدی سے کھڑی ہو۔راہل کا اندازبھی کچھ بدلاہے۔ انہوں نے ’انگری ینگ مین‘ کا ناٹک چھوڑکرسنجیدگی سے سوال اٹھائے ہیں جس سے ان کی ساکھ بڑھی ہے۔ سدھیندرکلکرنی نے، جو مسٹرباجپئی اورمسٹرآڈوانی کے قریبی رہے ہیں،یہاں تک کہہ دیاکہ راہل گاندھی اگلے وزیراعظم ہونگے۔شیوسینالیڈرادھو ٹھاکرے نے سامنا کے صفحہ اول پر جو مضمون لکھا اس میں راہل کی تعریف کی ہے اورلکھا ہے کہ انہوں نے ملک بھرمیں عوام کو متوجہ کرلیاہے۔ مگر مودی اور آرایس ایس کو ٹکردینے کے لئے اپنے اعصاب اورپارٹی دونوں کو مضبوط کرنا ہوگا ۔ ان کے اس نعرے میں بڑی جان ہے کہ ہم عوام کوجوڑیں گے اورغصے سے نہیں پیارسے بات کریں گے۔ اسی بات پر جم جانا چاہئے۔ کیڈرکومضبوط کرنے کے لئے ان تمام 19 ریاستوں میں ہل چل پیدا کرنی ہوگی جن پر بھگوا رنگ چڑھاہواہے ۔
جنیوکادکھاوا
لیکن ان کویہ سمجھ لینالازم ہوگا کہ ہندستان کے سارے عوام شیوبھگت اورجنیودھاری نہیں،نہ ہی اب وہ دور رہا جب برہمن ہی ’بھگوان ‘ ہوتا تھا۔تمہارے دادا فیروز گاندھی پارسی تھے،لیکن تمہاری دادی کوعوام نے بڑامقام دیا۔ تمہاری ماں کو،جوپیدائشی عیسائی ہیں، ہندستانی عوام نے سرآنکھوں پربٹھایا ۔ تم کیسے برہمن بن گئے؟ ہماری نوجوان نسل کو یہ بات بھی سمجھ لینی چاہئے کہ سیاسی پلیٹ فارم پر مذہب کے حوالے سے ووٹرکورجھانابیمار ذہنیت کی علامت ہے۔مذہب بیشک جوڑتا ہے، لیکن مذہبی سیاست اورگرہ بندیاں توڑتی ہیں۔ اس سے بچو۔ موئلی کے مشور ے پر بھاجپا کے نقش قدم پر نہ چلو جو فرقہ پرست ہندوؤں کی منھ بھرائی میں لگی ہے۔یاد رکھیں ہندستان میں دو ہی فرقے ہیں ۔اول دولت مندوں کا، دوسرا غریبوں اورمفلسوں کا۔ اورغریبی،محرومی، ناخواندگی بیماری اور بیروزگاری کاکوئی مذہب نہیں ہوتا۔ اس لئے آپ غریبوں، کاشتکاروں اوربے روزگاروں کی بات کریں۔ وہی اس ملک کی اکثریت ہیں۔نہ84فیصد ہندوؤں کی اکثریت ہے اورنہ عیسائی،پارسی ، آدی باسی اور مسلمان اقلیت میں ہیں۔ اکثریت پریشان حال لوگوں کی ہے اوراقلیت ان کی ہے جن کے پاس دھن دولت کی ریل پیل ہے۔ چنانچہ آپ غریب کا درد دیکھیں۔ جلسوں میں جنیو دکھاتے نہ پھریں۔ بھجن، پوجن اور عبادت وریاضت اپنی جگہ اہم ہے۔ ضروری ہے۔ مگرخداسے ملناہے توخدمت خلق میں تلاش کیجیے۔ کسی بے سہارا بڑھیاکی گٹھیاسرپر اٹھا کرگھرتک پہنچاکردیکھئے کتنا سکون ملتا ہے۔آپ بیشک ’یجوپویت سنسکار‘لے کر جنیودھارن کیجئے۔ لیکن یہ بھی جان لیجئے کہ جنیو کوئی دکھاوا نہیں۔ اسی لئے لباس کے اندرپہنا جاتا ہے ، باہر نہیں ۔ 
اگرواقعی عقیدت ہے تو بیشک مندروں میں جائیں یا گھرپرہی پوجا پاٹھ کرلیا کریں، لیکن سیاسی فائدے کے لئے خودکوجنیودھاری،شیوبھگت کے طورپر پیش کرکے اورمندروں کے چکر لگا کر وہی غلطی کو مت دوہراؤ جوراجیو گاندھی نے 1989میں کی تھی کہ پہلے رام مندر کا شیلانیاس کرایا اورپھر رام راجیہ کا لالی پاپ دکھاکر اپنی انتخابی مہم کاآغاز اجودھیا سے کیا۔ ایک سیکولر جمہوریت میں فرد کے مذہبی اعتقادات اوراعمال پر کوئی اعتراض نہیں کیا جاسکتا۔لیکن محض دکھاوے کے لئے یہ سب کچھ کرنے کا مطلب ہے کہ آپ عوام کو وہی مغالطہ دیناچاہتے ہیں جو مودی اوربھاجپا دیتی رہی ہیں اورقوم کے اندر اس سیکولر سائنسی فکر کوملیامیٹ کردیناچاہتے ہیں جو ایک روشن خیال معاشرے کی بنیاد ہوتا ہے اورجوجواہرلعل نہرو کو بہت عزیز تھا۔ ہمارا آئین ہمیں سوشل انجنئرنگ کی طرف لیجاتا ہے ، دھرم کی سیاست ملک کو تاریک دورمیں لیجارہاہے۔ اس میں حصہ دارمت بن جائیے چاہے دل کتناہی للچائے۔
مسلم امیدوار
گجرات میں کانگریس کے ٹکٹ پر چھ میں سے تین مسلم امیدوار بھی کامیاب ہوئے ہیں۔ جمال پورسے عمران یوسف بھائی،جوریکارڈ اکثریت سے جیتے ، دریا پورسے شیخ غیاث ا لدین اور ونکانیرسے پیرزادہ جاوید) ۔ جوہارے وہ معمولی فرق سے۔ قیاس یہ کیا جارہا ہے اگربی ایس پی اورنتیش کی جے ڈی یونے بڑی تعداد میں امیدوار نہ اتارے ہوتے تو کانگریس کے کم از کم 13امیدواراور جیت جاتے اوربھاجپا اقتدارسے باہرہوجاتی۔لیکن ان پارٹیوں کی یہ روش کوئی نئی بات نہیں۔ مایاوتی کی شاید مجبوری یہ ہے کہ وہ یوپی کی لالو پرساد یادونہیں بن جانا چاہتی ہیں۔ آخر اثاثے توان کے پاس بھی کم نہیں۔ ایک امیدواراین سی پی کا بھی جیتا ہے۔اب پارٹی کو یہ سمجھ آگئی ہے کہ چناؤ کانگریس کے ساتھ ہی لڑنا تھا۔ دیگرپارٹیوں میں بھی یہ سگ بگاہٹ ہے کہ اگلا چنا ؤ کانگریس کی قیادت میں لڑاجائے اورراہل کو مودی کے مد مقابل کے طورپر پیش کیا جائے۔
مسلم اقلیت پر اثر
ایک صاحب نے مجھ سے سوال کیا کہ ان نتائج کو مسلم اقلیت پر کیا اثرہوگا؟ ہم سارے ہندستانی باشندے گویاایک جہاز میں سوارہیں۔ اگرجہاز منزل پرپہنچاتو، ہم بھی پہنچیں گے اورڈوبا توہم بھی ڈوبیں گے۔اس لئے فکرپہلے ملک کی کرلیجئے۔ موجودہ سیاسی ماحول پورے ملک کیلئے خطرہ ہے۔ اس کو بدلنا چاہئے اوریہ تبھی بدلے گا جب ہم بدحال برادران وطن کی داررسی اوربھلائی کے لئے اٹھ کھڑے ہونگے۔ امت مسلمہ کواللہ نے اس لئے قائم نہیں کیا کہ ہم اپنی ہی فکر میں غلطاں رہیں، بلکہ اس لئے کیا ہے عالم انسانیت کی فکرکریں اورتواصوبالحق وتواصو بالصبر کے عامل بنیں۔